رسائی کے لنکس

رب نے بنا دی جوڑی

  • زیف سید

دل والے دلہنیا لے جائیں گے

دل والے دلہنیا لے جائیں گے

ثانیہ مرزا اور شعیب ملک کی منگنی کی خبر پر انٹرنیٹ کی مختلف ویب سائٹوں کا جائزہ

ثانیہ مرزا اور شعیب ملک کی منگنی کی خبردوسرے میڈیا کی طرح انٹرنیٹ پر بھی جنگل کی آگ کی طرح پھیلی ہے۔ ثانیہ مرزا تو خیر انٹرنیٹ بہت بہت ’ان‘ ہیں اور ان کا نہ صرف فیس پک کا پیج ہے بلکہ ٹوئٹر اکاؤنٹ بھی موجود ہے۔ اسی ٹوئٹر اکاؤنٹ پر ثانیہ نے لوگوں کا شکریہ ادا کیا ہے اور اپنی تازہ ترین مصروفیات سے دنیا کو آگاہ کیا ہے۔ ادھر شعیب ملک نے اپنے اکاونٹ (shoaibm6) کے ذریعے منگنی کی تصدیق کرتے ہوئے لکھتے ہیں:

Thanks for all your support. And the news of Me marrying to Sania is true. Inshallah will get married in April

اگرچہ ہمیں اس پیغام کی انگریزی، اور خاص طور پر اس فقرے the news of Me marrying to Sania is true سے کافی حد تک یقین ہو چلا تھا یہ شعیب ملک ہی کے قلم کا شاخسانہ ہے، لیکن ثانیہ نے ٹوئٹر اور فیس بک پر اطلاع دی ہے کہ یہ اکاؤنٹ جعلی ہے اور شعیب کا ٹوئٹر پر سرے سے کوئی اکاؤنٹ ہی نہیں ہے۔ خیرثانیہ بہتر جانتی ہوں گی۔ فی الحال تو ہم جائزہ لیتے ہیں انٹرنیٹ کے بحرِ ذخار کا کہ وہ کیا کہتا ہے۔

سوشل میڈیا اور بلاگنگ کی دنیا میں ہر طرف اسی خبر پر تبصرے ہو رہے ہیں۔ یہی نہیں بلکہ کسی من چلے نے تو www.saniamalik.com کے نام سے ویب سائٹ بھی بنا ڈالی ہے۔

فوٹو شاپ کے ایک زندہ دل ماہر نے لگے ہاتھوں ثانیہ کی پچھلی منگنی والی تصویر میں ان کے سابق منگیتر سہراب مرزا کی تصویر ہٹا کر اس کی جگہ شعیب ملک کی تصویر جڑ دی ہے۔ تاہم دونوں کے چہروں پر روشنی کا فرق صاف چغلی کھا رہا ہے کہ یہ دو مختلف مواقع پر لی گئی تصاویر ہیں۔

ثانیہ اور شعیب کی منگنی کی جعلی تصویر۔ شعیب کے چہرے پر روشنی باقی تصویر سے بالکل مختلف ہے

ثانیہ اور شعیب کی منگنی کی جعلی تصویر۔ شعیب کے چہرے پر روشنی باقی تصویر سے بالکل مختلف ہے

اگر آپ اصل تصویر دیکھنے کے مشتاق ہیں تو یہ رہی:

ہم نے اس سلسلے میں فیس بک پر ثانیہ مرزا کے ذاتی صفحے کا جائزہ لیا تو معلوم ہوا کہ ان کے مداحوں کا ایک جمِ غفیر ہے جو اس موقعے پر انہیں مبارک باد دینے کے لیے قطار اندر قطار وہاں آیا ہوا ہے۔ جیسا کہ انٹرنیٹ کا دستور ہے، یہاں بھی بھارتی اور پاکستانی نیٹ شہریوں میں خوب کھٹی میٹھی باتوں کے تبادلے ہو رہے ہیں اور ایک دوسرے پر ققرے چست کیے جا رہے ہیں، بلکہ بعض اوقات گالم گلوچ تک بھی نوبت پہنچ جاتی ہے۔ لیکن چوں کہ پاکستانی لڑکے والے ہیں، اس لیے کم از کم اس میدان میں ان کا پلہ بھاری نظر آ رہا ہے۔

کچھ لوگ (مثلا ضیا اختر) اس بات پر ناک بھوں چڑھا رہے ہیں کہ آخر دونوں نے دبئی میں رہنے کا فیصلہ کیوں کیا، کیا پاکستان انہیں رہائش کے قابل نظر نہیں آیا؟ جب کہ ایک صاحب (عدیل اختر راجا) نے کہا کہ پاکستان کرکٹ بورڈ کو چاہیئے کہ اس نے شعیب ملک پر تیس لاکھ روپے کا جو جرمانہ لگایا تھا وہ ثانیہ کی سلامی کی خاطر معاف کر دے۔ طلال افسر اور عمیر فاروق نے اپنے پیغامات میں لکھا ہے کہ بھارت نے گیارہ پاکستانی کھلاڑیوں کو مسترد کر دیا تھا، جب کہ ثانیہ نے شعیب کی شکل میں تمام بھارتیوں کو ٹھینگا دکھا دیا ہے۔ اسی صفحے پر پاکستان ہندوستان کے نام سے لکھنے والے ایک صاحب نے دوسرے لوگوں کو مبارک باد دی ہے کہ پاکستان اور ہندوستان کی دوستی اب رشتے داری میں بدل رہی ہے۔

فیس بک پر موقعے کی مناسبت سے ہمیں بھانت کے بھانت کے فلمی گانوں کا ذکر بھی دیکھنے کو ملا۔ نمونہ حاضر ہے:

منڈیا سیالکوٹیا
دل والے دلہنیا لے جائیں گے
رب نے بنادی جوڑی
بیگانی شادی میں عبداللہ دیوانہ

اسی طرح ٹوئٹر پر بھی خوب بازار گرم ہے۔ یہاں Kishn1102 دونوں کو مبارک باد دیتے ہوئے اس امید کا اظہار کرتے ہیں کہ اس شادی سے دونوں ملکوں کے تعلقات میں بھی تبدیلی آئے گی اور وہ بہتری کی طرف گام زن ہوں گے۔

ادھرکئی لوگوں نے ایک دل چسپ خبر کا لنک دیا ہے کہ ثانیہ کے خاندان میں دو ٹیسٹ کپتان گزرے ہیں۔ اس خبر میں کہا گیا ہے کہ آصف اقبال اور غلام احمد دونوں ثانیہ کے رشتے دار ہیں۔ آصف اقبال حیدرآباد ہی سے ہجرت کر کے پاکستان جا بسے تھے جب کہ اس خبر کے مطابق ثانیہ کے چچا غلام احمد 1940 اور 50 کی دہائی میں تین ٹیسٹ میچوں میں بھارت کی قیادت کر چکے ہیں۔

ٹوئٹر ہی پر prodizy نے مشورہ دیا ہے کہ امن کی آشا کے منتظمین کو چاہیئے کہ وہ اس شادی کو سپانسر کریں۔

جب سوشل ویب سائٹس کا یہ عالم ہے تو بلاگ کسی سے پیچھے کیوں رہیں؟ چناں چہ ایک بلاگ (newslinemagazine) پر ایک صاحب بڑے دور کی کوڑی لائے ہیں کہ کہیں یہ شادی شعیب ملک کی طرف سے آئی پی ایل میں کھیلنے کی چال تو نہیں؟ ایک اور صاحب (Khamba) تو اس شادی سے اس قدر دل برداشتہ ہوئے کہ انہوں نے آئندہ ٹینس نہ دیکھنے کی قسم کھائی ہے اور فیصلہ کیا ہے کہ وہ آج کے بعد صرف بیڈ منٹن کے میچ دیکھا کریں گے۔

بلاگ سپاٹ پر ایک تحریر (pensive-man.blogspot.com) میں صاحبِ بلاگ نے شاعرانہ موڈ میں آ کر ’احمد فراز‘ کے دو ’نیم اشعار‘ کا حوالہ بھی دیا ہے، جو آپ کی خدمت میں پیش ہیں:

انڈیا نے ہمارا پانی روک لیا تو کیا ہوا فراز
ہم نے بھی تو پوری ثانیہ مرزا چھین لی ہے

آئی پی ایل سے ہمارے گیارہ کھلاڑی مسترد ہوئے فراز
لو جاؤ ثانیہ مرزا نے تمام ہندوستانوں کو ہی مسترد کر دیا

نیم اشعار ہم نے اس لیے کہا کہ دونوں شعر وزن سے خارج ہیں۔ لیکن ہم اپنے قارئین کے لیے ان کا وزن درست کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ تو عرض کیا ہے:

پانی ہمارا روکا تھا انڈیا نے بے خطا
بدلے میں چھین لائے ہیں ہم ان کی ثانیہ

آئی پی ایل سے اپنے ہوئے تھے گیارہ کھلاڑی باہر
ثانیہ نے تو کر دیا سارے انڈیا کو ہی باہر

جنگ اخبار کے بلاگ میں محمد جاوید اپنے تبصرے میں اس بات سے اتفاق نہیں کرتے کہ اس شادی سے پاک بھارت تعلقات بہتر ہوں گے۔ وہ کہتے ہیں کہ یہ ان دونوں کا ذاتی معاملہ ہے اس کا سیاست سے کیا تعلق؟ اور یوں بھی پاکستان اور بھارت کے باشندوں میں ہزاروں شادیان ہوتی رہی ہیں لیکن چوں کہ یہ دونوں مشہور کھلاڑی ہیں اس لیے اہمیت دی جارہی ہے۔

اسی بلاگ پر اے اے فاروقی صاحب سرزنش کے موڈ میں نظر آتے ہیں۔ فرماتے ہیں کہ کیا میڈیا کے پاس باقی خبریں ختم ہوگئی ہیں جو اس قسم کی خبروں کو اتنی اہمیت دیتے ہیں۔ یہ تو وہی بات ہوئی کہ ’بیگانی شادی میں عبداللہ دیوانہ‘۔

- - - - -

یہ چند مثالیں مشتے از خروارے، یعنی کھلیان میں سے ایک مٹھی کا درجہ رکھتی ہیں۔ ہمیں یقین ہے کہ اگر آپ ان سائٹوں پر تھوڑا وقت صرف کریں تو اس سے کہیں زیادہ گہرپارے آپ کے ہاتھ آئیں گے۔

XS
SM
MD
LG