رسائی کے لنکس

’عزالدین القسام برگیڈ‘ کے تین لیڈر دہشت گرد قرار


محکمہٴخارجہ کی جانب سے منگل کو جاری کردہ ایک اخباری بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ اقدام انتظامی حکم نامے کے تحت اٹھایا گیا ہے، جس کے ذریعے اُن دہشت گردوں کو ہدف بنایا جاتا ہے جو دہشت گردوں کو امداد فراہم کرتے ہیں یا دہشت گردی کے عمل میں مدد دیتے ہیں

امریکی محکمہٴخارجہ نے حماس سے تعلق رکھنے والے یحیٰ سنوار، راہی مشتاہا اور محمد دعیف کو عالمی دہشت گرد قرار دیا ہے۔

محکمہٴخارجہ کی جانب سے منگل کو جاری کردہ ایک اخباری بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ اقدام انتظامی حکم نامے کے تحت اٹھایا گیا ہے، جس کے ذریعے اُن دہشت گردوں کو ہدف بنایا جاتا ہے جو دہشت گردوں کو امداد فراہم کرتے ہیں یا دہشت گردی کے عمل میں مدد دیتے ہیں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ امریکی شہریوں پر دہشت گردوں۔۔ یحیٰ سنوار، راہی مشتاہا اور محمد دعیف کے ساتھ مالی لین دین کی ممانعت ہوگی، جب کہ امریکہ کے اندر یا پھر اُن علاقوں میں جو امریکی زیر اثر یا کنٹرول میں ہیں، اُن کی ساری ملکیت منجمد کردی گئی ہے۔

تفصیل کے مطابق، یحیٰ سنوار حماس کے ایک رہنما ہیں، جو حماس کے فوجی دھڑے، ’عزالدین القسام برگیڈ‘ سے تعلق رکھتے ہیں، جسے پہلے ہی بیرونی دہشت گرد تنظیم قرار دیا جا چکا ہے۔ اُنھیں1988ء میں اسرائیل میں دہشت گرد سرگرمیوں کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا۔ سنوار کو مغوی اسرائیلی فوجی، گیلاد شلاط کے بدلے 2011ء جیل سے رہا کیا گیا تھا۔ اُس وقت، 1980ء کے عشرے کے اواخر میں دو اسرائیلی فوجیوں کے اغوا اور ہلاکت کے جرم میں وہ عمر قید کی سزا کاٹ رہے تھے۔

راہی مشتاہا کا تعلق حماس سے ہے، جب کہ وہ ’عزالدین القسام برگیڈ‘ کے بانیوں میں سے ہیں۔ اُنھیں دہشت گرد حرکات کی وجہ سے اسرائیل نے 1988ء میں گرفتار کیا تھا۔ تاہم، 2011ء میں اُنھیں اسرائیلی فوجی، گیلاد شلاط کی رہائی کے بدلے جیل سے رہا کیا گیا تھا۔

محمد دعیف ’عزالدین القسام برگیڈ‘ کے چوٹی کے کمانڈر ہیں۔ اُنھیں خودکش بم حملہ آوروں کی تعناتی اور اسرائیلی فوجیوں کو اغوا کرنے کا مجرم جانا جاتا ہے۔ اسرائیل اور حماس کے درمیان 2014ء کے تنازع کے دوران دعیف حماس کی لڑاکا حکمت علمی کا سرغنہ خیال کیا جاتا تھا۔

XS
SM
MD
LG