رسائی کے لنکس

شام عرب لیگ کے سربراہ کے دورے پر رضامند


نبیل العربی

نبیل العربی

حکومتِ شام کی طرف سے مارچ میں شروع ہونے والی پُر تشدد کارروائیوں میں اب تک 2200سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں، جب اصلاحات اور صدر بشار الاسد کے آمرانہ دور کے خاتمے کا مطالبہ کرتے ہوئے احتجاجی مظاہرین سڑکوں پر نکل آئے تھے: اقوام ِمتحدہ

عرب لیگ کے سربراہ کا کہنا ہے کہ شام نے اُن کے دورے کی میزبانی پر رضامندی کا اظہار کیا ہےجو رواں ہفتے ہوسکتا ہے، ایسے میں جب شام کے حکام سیاسی اختلاف ِرائے کو کچلنے کےلیے ملک بھر میں پُر تشدد کارروائی جاری رکھے ہوئے ہیں۔

عرب لیگ کےسکریٹری جنرل نبیل العربی نے اتوار کو قاہرہ میں کہا کہ حکومتِ شام نے اُنھیں بتایا ہے کہ وہ اُن کے دورے کا ’خیر مقدم‘ کرے گی۔ اُنھوں نے کہا کہ وہ ہلاکت خیز تشدد کے واقعات پر عربوں کی طرف سےتشویش کا اظہار کریں گے جِس کے باعث ملک لرز کر رہ گیا ہے، اور اِس سلسلے میں شام کے راہنماؤں کی آرا ٴ کو سنیں گے۔

ایک ہفتہ قبل، شام کے حکام نے عرب لیگ کےاُس بیان کو مسترد کردیا تھا جِس میں تشدد کے خاتمے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔ عربوں کی تنظیم نے، جِس کا شام بھی ایک رکن ہے، حکومتِ شام سے مطالبہ کیا ہے کہ خونریزی بند کی جائے، اِس سے قبل کہ ’بہت زیادہ تاخیر ہوجائے‘۔

اقوام متحدہ نے کہا ہے کہ حکومتِ شام کی طرف سےمارچ میں شروع ہونے والی پُر تشدد کارروائیوں میں اب تک 2200سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں، جب اصلاحات اور صدر بشار الاسد کے آمرانہ دور کے خاتمے کا مطالبہ کرتے ہوئے احتجاجی مظاہرین سڑکوں پر نکل آئے تھے۔

حکومتِ شام کا کہنا ہے کہ تشدد کی کارروائیوں کا ذمہ دار، اُس کے بقول، وہ مسلح جتھےاور دہشت گرد ہیں جِنھیں غیر ملکی سازشی عناصر کی حمایت حاصل ہے۔

XS
SM
MD
LG