رسائی کے لنکس

سیاست میں، وقت کا چناؤ سب سے اہم ہوتا ہے۔ بیشک روبیو کے ہونٹ خشک ہوگئے تھے۔ لیکن، وہ ساعت امر ہو چکی ہے۔ دنیا بھر کے کروڑوں لوگوں نے سنجیدہ خطاب کے دوران روبیو کو پانی پیتے ہوئے دیکھا

یہ داستان ہےسیاسی خطاب کے دوران پانی پینے کی۔

ہوا کچھ یوں کہ منگل کو صدر براک اوباما پارلیمان کے مشترکہ اجلاس سے’ اسٹیٹ آف دی یونین‘ خطاب کرچکے، اور فلوریڈا سے تعلق رکھنے والے ریپبلیکن پارٹی کے سینیٹر مارکو روبیو کی باری آئی، اور وہ اپنی پارٹی کی طرف سے جوابی خطاب کرنے لگے۔

رائٹرز نے اپنی خبر میں کیا خوب کہا ہے کہ ’روبیو کے الفاظ تو شاید بہت عرصے تک یاد نہ رہیں، لیکن تقریر کرتے کرتے جس طرح وہ جھکے اور پانی کی بوتل کی طرف لپکے، وہ لمحہ ایک طویل مدت تک ضرور یاد رہے گا‘۔

ویب پر Deadspin.com سے ’دِی نیو یارکر‘ تک اور کیبل کے تقیرباً ہر ایک نیوز چینل نے مارکو روبیو کی طرف سے تقریر کرتے ہوئے اچانک پانی کے دو قطرے پینےکے لیے بوتل کی طرف ہاتھ بڑھانے اور پانی پینے کو ایک یادگار لمحہ قرار دیا ہے۔

سیاست میں، وقت کا چناؤ سب سے اہم ہوا کرتا ہے۔

بیشک روبیو کے ہونٹ خشک تھے، لیکن وہ ساعت خشک تر بن چکی ہے۔ دنیا بھر کے کروڑوں لوگوں نے روبیو کو غائب ہوتے اور پھر پانی پیتے دیکھا۔

ہوا کچھ یوں کہ بولتے بولتے وہ اچانک اسکرین سے غائب سے ہوگئے، پتا چلا کہ ’پولینڈ اسپرنگ‘ کی بوتل لے آئے اور کیمرے کے سامنے اُس میں سے کچھ گھونٹ پینے لگے۔

اس منظر نے ناظرین کو حیران سا کر دیا۔

اس کے بارے میں، ٹویٹر پر ردِ عمل اور بیانات کی بھرمار ہوگئی۔ اور تو اور، ڈونالڈ ٹرمپ بھی بول پڑے۔ اُن کے الفاظ میں، ’آئندہ جب کبھی مارکو روبیو کو پانی پینے کی ضرورت محسوس ہو، تو اُنھیں گلاس سے ہی پانی پینا چاہیئے، نہ کہ بوتل سے۔ یہ کوئی مناسب تاثر نہیں تھا۔‘

بات یہ ہے کہ اس سے ’پولینڈ اسپرنگ‘ کو ایک موقع ضرور فراہم ہوا۔

پورا پورا فائدہ اٹھاتے ہوئے، کمپنی کی مشہوری کے لیے، ادارے نے فیس بک پر بوتل کی تصویر چسپاں کر ڈالی، جو ڈریسنگ روم کے ایک شیشے کے سامنے رکھی ہوئی تھی۔
XS
SM
MD
LG