رسائی کے لنکس

خلیج میکسیکو میں تیل کے اخراج کی تفصیلی ٹیکنیکل رپورٹ


اعلیٰ سطحی ٹیکنیکل رپورٹ میں تفصیل کے ساتھ ان واقعات کا اسی ترتیب سے جائزہ لیا گیا ہے جس ترتیب سے وہ اس سال 20 اپریل کو خلیج میکسیکو کے گہرے پانیوں میں وقوع پذیر ہوئے اور آئل رگ میں دھماکےاور اس کے ڈوبنے کا سبب بنے۔

برطانوی تیل کمپنی برٹش پٹرولیم نے ایک رپورٹ جاری کی ہے جس میں ان تمام سلسلے وار واقعات کاجائزہ لیا گیا ہے جو خلیج میکیکو کے زیر آب کنویں سے تیل کے اخراج کا باعث بنے تھے۔

اعلیٰ سطحی ٹیکنیکل رپورٹ میں تفصیل کے ساتھ ان واقعات کا اسی ترتیب سے جائزہ لیا گیا ہے جس ترتیب سے وہ اس سال 20 اپریل کو خلیج میکسیکو کے گہرے پانیوں میں وقوع پذیر ہوئے اور آئل رگ میں دھماکےاور اس کے ڈوبنے کا سبب بنے۔ برٹش پٹرولیم یعنی بی پی کے اعلیٰ تفتیش کار مارک بلے نے یہ تفصیلات ویڈیو فلموں کے ساتھ پیش کیں۔

انہوں نے کہا کہ ڈرل پائپ پر ایک مضبوط سیل لگانے کے لیے ایسے آلات لگادیے گئے ہیں جو اس سے زیادہ دباؤ برداشت کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں جتنا کہ کنویں میں تیل کا ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ متعدد کمپنیوں اور کارکنوں کی ٹیموں کے جانب سے کیے جانے والے فیصلوں نے تیل کے کنویں کے حادثے میں کردار ادا کیا۔جن میں پیچیدہ اور ایک دوسرے سے منسلک مکینکل نوعیت کی ناکامیاں، صورت حال کے بارے میں قائم کیے جانے والے انسانی اندازوں، انجنیئروں کے ڈیزائن ، فیصلوں کے اطلاق اور ٹیم کے طورپر کام کرنے کے معاملات شامل ہیں۔

مارک بلے کا کہنا تھا کہ ہم اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ وہاں کوئی ایک بھی ایسا عمل یا بے عملی نہیں ہوئی جو حادثے کا سبب بنتی۔ تاہم ہمیں اس سانحے کا باعث بننے والے کہ آٹھ باہم منسلک اور عناصر کا پتاچلا ہے۔

سائمن باکسل برطانیہ کے سمندری تحقیق کے قومی مرکز کے ایک ماہر ہیں۔ وہ کہتے ہیں کہ یہ کوئی سیاسی نوعیت کی رپورٹ نہیں ہے۔ اور نہ ہی یہ میڈ یا یا عوامی دلچسپی کی رپورٹ ہے۔ یہ رپورٹ اس لیے تیار کی گئی ہے تاکہ تیل کی صنعت اور تیل کی تلاش کرنے والوں کی قانونی ٹیم اس پورے معاملے کا جائزہ لے سکے۔

ان کا کہنا ہے کہ انڈسٹری اور اسے چلانے والوں کو اپنے طریقے بدلنے کی ضرورت ہے۔ اور اس صنعت کو نگرانی کے اپنے طریقوں کابغور جائزہ لینا چاہیے۔ اس معاملے میں یہ واضح ہے کہ حکومتی انسپکٹر اس سانحے کا سبب بننے والے کچھ مسائل کی نشاندہی میں ناکام رہے ہیں۔

یہ رپورٹ امریکی تاریخ کے تیل کے سب سے بڑے سانحے کا سبب بننے کی چھان بین کا محض ایک آغاز ہے جس کے بارے میں توقع ہے کہ ان تحقیقات اور قانونی عوؤں پر برسوں لگ سکتے ہیں۔

XS
SM
MD
LG