رسائی کے لنکس

اگر سینیٹ سے اُن کی نامزدگی کی توثیق ہوجاتی ہے تو ڈیموکریٹ پارٹی سے تعلق رکھنے والے اس قانون ساز کو یہ ذمہ داری دی جائے گی کہ وہ ایشیا کے ساتھ امریکہ کے اسٹریٹجک تعلقات کو متوازن بنانے میں مدد دیں

بتایا گیا ہے کہ بااثر سینیٹر، میکس باؤکس کو امریکہ کا چین میں اگلا سفیر نامزدکیا گیا ہے، جو کہ اُن دو سفارتی تعیناتیوں میں سے ایک پیچیدہ ترین سفارتی عہدہ ہے، ایسے وقت جب چین کے ساتھ تناؤ میں اضافے کا ماحول درپیش ہے۔

سینیٹ کے مشیروں کا کہنا ہے کہ صدر براک اوباما ممکنہ طور پر جمعرات کو ہی باؤکس کی نامزدگی کا اعلان کرسکتے ہیں، جو ایک معروف قانون ساز ہیں، جو چین کے متنازع تجارتی انداز کے خلاف سخت ترین مؤقف اختیار کرتے رہے ہیں۔

اِن رپورٹوں پر بیان میں چین کی وزارت خارجہ کے ترجمان، ہُوا چُن یینگ نے کہا کہ جو بھی سفیر کے فرائض سنبھالے اُنھیں چاہیئے کہ صحتمند امریکہ چین تعلقات کو فروغ دینے کے لیے کام کرے۔

بَہتر برس کے باؤکس کا تعلق ریاستِ مونٹانا سے ہے۔ وہ پہلے ہی یہ اعلان کر چکے ہیں کہ 2014ء کے اواخر تک وہ سینیٹ سے ریٹائر ہو جائیں گے۔ اِس وقت وہ سینیٹ کی مالیات کی کمیٹی کے سربراہ ہیں، جو محصول اور آمدن کے امور سے تعلق رکھتی ہے۔

اگر سینیٹ سے اُن کی نامزدگی کی توثیق ہوجاتی ہے تو ڈیموکریٹ پارٹی سے تعلق رکھنے والے اس قانون ساز کو یہ ذمہ داری دی جائے گی کہ وہ ایشیا کے ساتھ امریکہ کے اسٹریٹجک تعلقات کو متوازن بنانے میں مدد دیں۔ حالانکہ باؤکس نے چین کے صدر لِی جِن پنگ سے متعدد بار ملاقات کی ہے، لیکن اُنھیں امریکہ چین کے سلامتی کے امور پر کام کرنے کا کم ہی تجربہ ہے۔

باؤکس چین میں موجودہ امریکی سفیر، گیری لوک کی جگہ لیں گے، جنھوں نے گذشتہ ماہ اعلان کیا تھا کہ وہ سبک دوش ہونا چاہتے ہیں، تاکہ اپنے خاندان کو زیادہ وقت دے سکیں۔
XS
SM
MD
LG