رسائی کے لنکس

امریکہ: لاپتا کشتی راں دو ماہ بعد مل گیا


فائل فوٹو

فائل فوٹو

یہ نہیں بتایا گیا کہ کشتی کتنی دیر الٹی رہی مگر جورڈن نے کہا کہ وہ اس دوران زندہ رہنے کے لیے مچھلیاں پکڑ کر کھاتا رہا۔

ایک شخص جس کے گھر والوں کے مطابق وہ دو ماہ سے سمندر میں لاپتا تھا جمعرات کو امریکی ریاست شمالی کیرولائنا کے ساحل سے 300 کلومیٹر دور سمندر میں اپنی الٹی کشتی کے پتوار پر بیٹھا ہوا مل گیا۔

امریکی ساحلوں کی حفاظت پر مامور کوسٹ گارڈ کے اہلکاروں نے ریاست ورجینیا میں بتایا کہ انہیں ایک جرمن ٹینکر سے خبر ملی تھی کہ انہوں نے ایک شخص اور اس کی کشتی کو کیپ ہیٹیراز کے مشرق میں دیکھا ہے۔

جس کے بعد شمالی کیرولائنا سے کوسٹ گارڈ کا عملہ ایک ہیلی کاپٹر کے ذریعے اس کشتی تک پہنچا اور لوئس جورڈن نامی اس شخص کو وہاں سے لا کر ریاست ورجینیا کے ایک ہسپتال پہنچایا۔ کوسٹ گارڈ کی ترجمان کے مطابق 37 سالہ جورڈن کا کندھا زخمی تھا مگر انہوں نے مزید معلومات فراہم نہیں کیں۔

کوسٹ گارڈ کے ایک افسر نے بتایا کہ جورڈن کی کشتی کا مستول تباہ ہو گیا تھا اور وہ الٹ گئی تھی۔ ٹینکر کے عملے نے بتایا کہ جب انہوں نے جورڈن کو دیکھا تو وہ الٹی کشتی کے پتوار پر بیٹھا تھا۔

یہ نہیں بتایا گیا کہ کشتی کتنی دیر الٹی رہی مگر جورڈن نے کہا کہ وہ اس دوران زندہ رہنے کے لیے مچھلیاں پکڑ کر کھاتا رہا۔

سمندر میں جانے سے پہلے جورڈن جنوری تک جنوبی کیرولائنا کے ساحل پر کھڑی اپنی کشتی میں رہ رہا تھا۔ پھر اس نے اپنے گھر والوں سے کہا کہ وہ مچھلیاں پکڑنے کھلے سمندر میں جانا چاہتا ہے۔ اس کے بعد سے اس کے گھر والوں کو اس کا کچھ پتا نہیں چلا۔

اس کی ماں نورما ڈیوس نے ایک ٹیلی فون انٹرویو میں بتایا کہ ’’ہمیں توقع تھی کہ وہ واپس آ جائے گا، مگر وہ نہیں آیا۔ ہمیں پتا چل گیا کہ اسے کچھ ہو گیا ہے۔ یہ تو ایک معجزہ ہے۔ ہم بے حد خوش ہیں کہ وہ زندہ مل گیا ہے۔‘‘

XS
SM
MD
LG