رسائی کے لنکس

ضابطوں کا انحراف، جاپانی بینک پر25 کروڑ ڈالر جرمانہ


جاپانی اسٹاک ایکسچینج

جاپانی اسٹاک ایکسچینج

بینک پر الزام تھا کہ اُس نے ایران، سوڈان اور میانمار کو امریکی اکاؤنٹس کے ذریعے رقوم کی ترسیل کی سہولت فراہم کی، حالانکہ امریکہ نے اِن تینوں ممالک سے لین دین پر بندش عائد کر رکھی تھی

نیو یارک ریاست کے مالی ضابطوں کے منتظمین نےجاپان کے سب سے بڑے بینک پر منی لانڈرنگ کے جرم میں25 کروڑ ڈالر جرمانہ عائد کیا ہے۔

بینک پر الزام تھا کہ اُس نے ایران، سوڈان اور میانمار کو امریکی اکاؤنٹس کے ذریعے رقوم کی ترسیل کی سہولت دی، حالانکہ امریکہ نے اِن تینوں ممالک سے کاروباری لین دین پر بندش عائد کر رکھی تھی۔

نیو یارک کے عہدے داروں نے جمعرات کے روز بتایا کہ ’بینک آف ٹوکیو—مٹسوبشی‘ نے2002ء سے 2007ء کے درمیان اپنی نیویارک کی اپنی شاخوں سے 100ارب ڈالر مالیت پر مبنی 28000 ادائگیوں کی راہ ہموار کی۔

ضابطہ کاروں کا کہنا ہے کہ رقوم کی لین دین کرنے والے کارکنوں کو بینک کی طرف سے ہدایات یہ تھیں کہ اس اطلاع کو نظرانداز کیا جائے، جِس سے یہ پتا چلتا کہ یہ لین دین ایک ’دشمن ملک‘ کے ساتھ کی جا رہی ہے۔

قبل ازیں، اسی مقدمے میں بینک نے امریکی حکام کو 86 لاکھ ڈالر کا جرمانہ ادا کیا تھا۔

تاہم، بینک کا کہنا تھا کہ اُس کی طرف سے امریکی حکام کو رضاکارانہ طور پر غیر قانونی لین دین کے بارے میں چوکنہ کیا گیا تھا، اور یہ کہ تب سے بینک اپنے داخلی کنٹرول کے طریقہٴ کار میں بہتری لانے کی کوشش کرتا رہا ہے۔
XS
SM
MD
LG