رسائی کے لنکس

یمن میں صدارتی انتخابات کا اعلان


نائب یمنی صدر ابد ربو منصور حادی ایک اجلاس کی سربراہی کرتے ہوئے (فائل فوٹو)

نائب یمنی صدر ابد ربو منصور حادی ایک اجلاس کی سربراہی کرتے ہوئے (فائل فوٹو)

صدر علی عبداللہ صالح کی جانب سے اقتدار کی اپنے نائب کو منتقلی کے معاہدے پر دستخط کے چند روز بعد ہی یمن میں صدارتی انتخابات 21 فروری کو کرانے کا اعلان کیا گیا ہے۔

نائب صدر ابد ربو منصور حادی نے قبل از وقت انتخابات سے متعلق حکم نامہ ہفتہ کو جاری کیا۔

مسٹر صالح اور یمن میں حزب مخالف کے رہنماؤں نے خلیجی ریاستوں کی تعاون تنظیم کے تجویز کردہ منصوبے پر بدھ کو دستخط کیے تھے، جس کے تحت مسٹر صالح کی طرف سے اقتدار کی منتقلی کے بعد اُن کے نائب نے قومی اتحادی حکومت کی تشکیل کا عمل شروع کرنا ہے۔

معاہدے کا مقصد مسٹر صالح کے 33 سالہ اقتدار کے خلاف کئی ماہ سے جاری احتجاجی مظاہروں کا خاتمہ ہے۔ تاہم صدر کے مخالفین نے اس کے خلاف بھی مظاہرے کیے ہیں کیوں کہ اس کے تحت مسٹر صالح کو عدالتی کارروائی سے مستثنیٰ قرار دیا گیا ہے۔

ادھر فرانسیسی خبر رساں ادارے کے مطابق حکومت مخالف اتحاد نے قومی اتحادی حکومت کی سربراہ کے لیے Mohammed Basindawa کو نامزد کیا ہے۔

دریں اثنا امریکہ نے یمن میں حزب اقتدار و اختلاف کی جماعتوں پر زور دیا ہے کہ وہ اقتدار کی جلد از جلد منتقلی کے لیے ’’اپنے آپ کو مکمل طور پر وقف کر دیں‘‘۔

یمن میں انتخابات کی تاریخ کے اعلان کے بعد صدر براک اوباما کے انسداد دہشت گردی سے متعلق مشیر نے مسٹر حادی سے رابطہ کیا کیوں کہ واشنگٹن کو خدشہ ہے کہ اس ملک میں سرگرم القاعدہ کے عسکریت پسند سیاسی عدم استحکام کا فائدہ اُٹھاتے ہوئے اپنی تنظیم کو مضبوط کرنے کی کوشش کر سکتے ہیں۔

XS
SM
MD
LG