منگل, جولائی 22, 2014 مقامی وقت: 07:20

  • کینیڈا کے برف پوش علاقے میں 430 ایکڑ پر محیط سیبوں کے باغ میں پھل مکمل طور پر تیار ہو چکے ہے۔
  • موسم سرما میں پھلوں کو درختوں سے علیحدہ کر کے ان سے مشروب ’ آئس سائیڈر‘  تیار کیا جاتا ہے۔
  • سیبوں کا یہ فارم ہاؤس ڈیڑھ سو سال سے زائد پرانا ہے۔
  •  کینیڈا کے کیوبک صوبے کے ایک چھوٹے سے شہر فریلگسبرگ میں سیب کے باغ کا ایک دلکش منظر
  • سخت سردی کے اس موسم میں توڑے گئے سیبوں سے رس حاصل کر کے پھر اسے جمنے کے لیے چھوڑ دیا جاتا ہے۔
  • کیوبک میں بننے والا مشرب ’ آئس سائیڈر‘  دنیا کے 60 ممالک میں فروخت کیا جاتا ہے۔
  •   سیبوں کو توڑنے کے بعد اچھی طرح صاف کیا جاتا ہے اور اس بات کا خاص خیال رکھا جاتا ہے کہ سیبوں کے  ساتھ برف نہ رہے۔
  •  باغ کے منیجر گائلز ڈرل کا کہنا ہے کہ وہ ہر روز سیب توڑنے کے لیے دو درختوں کا انتخاب کرتے ہیں۔
  • جب درجہ حرارت نقطۂ انجماد سے تقریباً آٹھ سے 15 ڈگری تک نیچے چلا جاتا ہے تب ان سیبوں کو توڑا جاتا ہے۔
  •  منیجر گائلز ڈرل سیبوں کے باغ میں کام کر رہے ہیں۔

کینیڈا کے برف پوش علاقے میں پرانا سیبوں کا باغ

28.12.2013 کو شائع ہوئی

کینیڈا میں 430 ایکڑ پر محیط سیبوں کے باغ میں پھل مکمل طور پر تیار ہو چکا ہے۔ موسم سرما میں پھلوں کو درختوں سے علیحدہ کر کے ان سے مشروب ’ آئس سائیڈر‘ تیار کیا جاتا ہے جو کہ اس ڈیڑھ سو سال سے زائد پرانے فارم ہاؤس کا ایک خاصہ ہے۔

فوٹوز

فوٹوز