رسائی کے لنکس

جرمنی سے افغان پناہ گزینوں کی ملک بدری عارضی طور پر معطل


(فائل فوٹو)

کابل میں رواں ہفتے ایک مہلک ٹرک بم دھماکے کے بعد جرمنی نے اپنے ملک میں پناہ کے متلاشی افغان پناہ گزینوں کو واپس بھیجنے کا عمل عارضی طور پر معطل کر دیا ہے۔

جرمنی کے خبر رساں ادارے ’ڈی پی اے‘ اور فرانسیسی خبر رساں ادارے ’اے ایف پی‘ کے مطابق جرمن چانسلر اینگلا مرکل نے جمعرات کو کہا کہ جب تک جرمن وزارت خارجہ افغانستان کی سلامتی کی موجودہ صورت حال کا جائزہ نہیں لے لیتی، اُس وقت تک افغانوں کی واپسی کا عمل معطل رہے گا۔

کابل کے ایک سفارتی علاقے میں 31 مئی کو ہونے والے بم حملے میں 90 افراد ہلاک اور لگ بھگ 400 زخمی ہو گئے تھے، اس بم حملے میں جرمن سفارت خانے کو بھی نقصان پہنچا تھا۔

لیکن پناہ گزینوں کی ملک بدری کے عمل کو عارضی طور پر روکنے کا اطلاق اُن افراد پر نہیں ہو گا جو جرائم میں ملوث ہیں یا جرمنی کی سلامتی کے لیے خطرہ ہیں۔

اُن افغان پناہ گزینوں کی واپسی کا عمل جاری رہے گا جن کی پناہ کی درخواستیں مسترد کی جا چکی ہیں اور وہ رضا کارانہ طور پر واپس جانا چاہتے ہیں۔

ایسے افغان جن کی پناہ کی درخواستیں رد ہو چکی تھیں، ماضی میں افغانستان میں سلامتی کی صورت حال کے باعث اُنھیں جرمنی میں رہنے کی اجازت دی گئی تھی۔

لیکن گزشتہ سال جرمن حکومت نے فیصلہ کیا کہ افغانستان کے وہ علاقے جو محفوظ ہیں وہاں پناہ گزینوں کو واپس بھیج دیا جائے۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG