رسائی کے لنکس

logo-print

ایران کی جانب سےجوہری انسپکٹروں پر پابندی پر آئی اے ای اے کا اظہار تاسف


اقوام متحدہ کے جوہری توانائی کے ادارے کے سربراہ کا کہنا ہے کہ انہیں ایران کی جانب سے دو جوہری انسپکٹروں پر پابندی کے فیصلے پر رنج ہوا ہے۔

یوکیا ایمانو کا کہنا تھا کہ ایران کی طرف انسپکٹروں پر بار بار کے اعتراض سےادارے کی تحقیقات متاثر ہوئی ہیں۔

ایران نے جوہری انسپکٹروں پر اپنے جوہری پروگرام کےبارے میں غلط معلومات فراہم کرنے کا الزام لگایاتھا ۔

ایمانو نے جوہری توانائی کے عالمی ادارے کے 35 ممالک پر مشتمل بورڈ کے اجلاس میں بتایا کہ انہیں اپنے انسپکٹروں کی پیشہ ورانہ صلاحیت اور غیر جانب داری پر مکمل اعتماد ہے۔

اس مہینے کے شروع میں آئی اے ای اے نے کہا تھا کہ ایران نے حالیہ برسوں کے دوران 2.8 ٹن کم افزودہ جوہری مواد تیار کرلیا ہے۔

تہران کئی بار یہ تردید کرچکاہے کہ اس کے جوہری پروگرام کا مقصد ایٹمی ہتھیار بنانا ہے اور یہ کہ اس کا جوہری پروگرام پرامن مقاصد کے لیے ہے۔

امریکہ اور اس کے اتحاد ایران پر یہ ا لزام لگاتے ہیں کہ وہ سویلین نیوکلیئر پروگرام کی آڑ میں جوہری ہتھیار تیار کررہا ہے۔

اسی سلسلے کی ایک اور خبر کے مطابق اقوام متحدہ کی جوہری نگرانی کے ادارے نے بلجیئم کے ایک جوہری ماہر ہرمن نیک کارٹس کو نئے چیف انسپکٹر کے طورپر منتخب کرلیا ہے۔

نیک کارٹس جوہری ادارے کے حفاظتی امور سے متعلق شعبے کے نگران ہوں گے ۔ اس شعبے کی ذمہ داری یہ تصدیق کرنا ہے کہ مختلف ممالک کی جوہری سرگرمیوں کو فوجی مقاصد کے لیے استعمال نہیں کیا جارہا۔

XS
SM
MD
LG