رسائی کے لنکس

logo-print

بھارت میں غذائی تحفظ کے منصوبے کی منظوری


حزب مخالف نے اس پروگرام کو جلد بازی میں شروع کرنے پر سوال اٹھاتے ہوئے کہا ہے کہ اسے پارلیمان کے آئندہ اجلاس میں بحث کے لیے پیش کیا جاسکتا تھا۔

بھارت میں حکومت نے ایک بڑے غذائی پروگرام کی منظوری دی ہے جس سے ملک کے غریب افراد کو غذائی تحفظ فراہم ہو سکے گا۔

پارلیمنٹ میں قانون سازی کی بجائے ایک حکم نامے کے تحت اربوں روپے کا یہ پروگرام شروع کیا گیا جس سے ملک کی آبادی کے لگ بھگ 70 فیصد حصے کو خوراک کی فراہمی ممکن ہو سکے گی۔

صدر پرنب مکھرجی قومی غذائی تحفظ کے اس بل پر دستخط کرنے جا رہے ہیں جس سے فوری طور پر یہ قانون کی شکل اختیار کر جائے گا، لیکن اس کی پارلیمان سے منظوری بہرحال ضروری ہو گی۔

مبصرین کا کہنا ہے کہ یہ اقدام آئندہ سال ہونے والے عام انتخابات سے قبل حکمران جماعت کانگریس کی مقبولیت میں اضافے کا باعث بنے گا۔

حزب مخالف نے اس پروگرام کو جلد بازی میں شروع کرنے پر سوال اٹھاتے ہوئے کہا ہے کہ اسے پارلیمان کے آئندہ اجلاس میں بحث کے لیے پیش کیا جاسکتا تھا۔

اقوام متحدہ کے مطابق افریقی ممالک کے نسبت غذائی قلت بھارت میں زیادہ ہے۔ عالمی ادارہ برائے اطفال ’یونیسف‘ کا کہنا ہے کہ بھارت میں ہر تین میں سے ایک بچہ غذائی قلت کا شکار ہے اور کم عمری میں ہونے والی اموات کا یہ ایک بڑا سبب ہے۔
XS
SM
MD
LG