رسائی کے لنکس

logo-print

ایرانی بیڑا امریکی بحری حدود کے قریب


امریکی طیارہ بردار بیڑا خلیج فارس میں

ایرانی بحریہ کے شمالی بیڑے کے کمانڈر نے کہا ہے کہ یہ جہاز پہلی مرتبہ امریکی بحری حدود کے قریب تر ہوں گے، اور یہ کہ، ’اِس کے پیچھے ایک پیغام پنہاں ہے‘

ایرانی بحریہ کے ایک کمانڈر کا کہنا ہے کہ ایران نے اپنے متعدد جنگی جہازوں کو امریکہ کی بحری حدود کی طرف جانے کے احکامات دیے ہیں، جو اقدام، بقول اُن کے، امریکی بحریہ کے جہازوں کی طرف سے خلیجِ فارس میں پڑاؤ ڈالنے کے جواب میں اٹھایا گیا ہے۔

ہفتے کے روز ایرانی ابلاغِ عامہ نے ایڈمرل افشیں رضائی حَداد کے حوالے سے بتایا ہےکہ ایک تباہ کُن بحری جہاز اور ہیلی کاپٹر بردار جہاز پہلے ہی جنوبی افریقہ کے قریب بحر ِاوقیانوس میں داخل ہوچکے ہیں۔

حَداد، ایرانی بحریہ کے شمالی بیڑے کے کمانڈر ہیں۔

اُنھوں نے کہا ہے کہ یہ جہاز پہلی مرتبہ امریکی بحری حدود کے قریب تر ہوں گے، اور یہ کہ، ’اِس کے پیچھے ایک پیغام پنہاں ہے‘۔

بتایا جاتا ہے کہ ان سمندری جہازوں نے اپنا سفر پچھلے ماہ ایران کے جنوبی شہر، بندر عباس سے شروع کیا تھا۔ ایرانی رپورٹوں میں کہا گیا ہے کہ اِن سمندری جہازوں پر عام عملے کے ساتھ ساتھ تربیت کی غرض سے، بحری اکیڈمی کے کچھ کیڈٹس سوار ہیں۔ وہ تین ماہ کے ایک مشن پر ہیں۔

اسلامی جمہوریہ اِسے ایرانی پانیوں کے قریب امریکی بحریہ کی تعیناتی کا ایک جواب خیال کرتا ہے۔

امریکی بحریہ کی خلیج فارس میں موجودگی ایک عام سا عمل ہے۔ امریکہ کا پانچواں بیڑا بحرین میں تعینات ہے، جو ایران کے ساتھ والی خلیج کے پار واقع ہے۔
XS
SM
MD
LG