رسائی کے لنکس

logo-print

روسی صدر کے متنازع جزیرہ کے دورے پر جاپان کا احتجاج


روسی صدر کے متنازع جزیرہ کے دورے پر جاپان کا احتجاج

جاپان نے روسی صدرکی طرف سے دونوں ملکوں کے درمیان متنازع جزائر کے دورے کے خلاف سفارتی سطح پر احتجاج کیا ہے۔

ان جزائر کو روس میں کُرالس کہا جاتا ہے اور وہ اسے اپنا حصہ سمجھتا ہے جبکہ جاپان انھیں اپنا شمالی علاقہ تصور کرتا ہے۔ دمتری میدویدیف ان چار جزائر میں سے کسی ایک کا دورہ کرنے والے پہلے روسی صدر ہیں۔

جاپان میں منعقد ہو نے والی اقتصادی کانفرنس میں روسی صدر کی شرکت سے قبل اس واقعے کی وجہ سے دونوں ملکوں کے درمیان کشیدگی کی فضا پیدا ہو گئی ہے۔

جاپانی وزیراعظم ناؤتوکان نے روسی صدر کے کُناشری جزیرہ کے دورے کو ’قابل افسوس‘ قرار دیا ہے اور جاپانی وزیرخارجہ نے روس کے سفیر کو بلا کر اس پر احتجاج ریکارڈ کرایا ہے۔

روسی سفیر میخائل بیلے نے صحافیوں کو بتایا کہ روس اس دورے کو ایک اندرونی معاملہ سمجھتا ہے۔

دوسری جنگ عظیم کے بعد سوویت یونین کی طرف سے ان جزائر پر قبضے کے بعد سے جاپان اس علاقے کی واپسی کا مطالبہ کرتا چلا آرہا ہے۔

XS
SM
MD
LG