رسائی کے لنکس

logo-print

امریکی ریاست میں آتشزدگی سے پہلا ایٹم بم تیار کرنے والی تجربہ گاہ کو خطرہ


امریکی ریاست میں آتشزدگی سے پہلا ایٹم بم تیار کرنے والی تجربہ گاہ کو خطرہ

امریکی ریاست نیو میکسیکو میں وسیع پیمانے پر بھیلی ہوئی آگ سے وہاں پر موجود جوہری ہتھیاروں کی ایک تجربہ گاہ کو خطرہ لاحق ہوگیا ہے۔ یہ وہی تجربہ گاہ ہے جہاں پہلا ایٹمی بم تیار کیا گیا تھا۔

امریکی حکام کا کہنا ہے کہ لاس ایلاموس قومی لیبارٹری محفوظ ہے، تاہم قابو سے باہر ایک بڑی لگی ہوئی آگ وسیع و عریض رقبے پر پھیلی ہوئی اس لیبارٹری سے صرف چند کلومیٹر دور ہے۔ بدھ کے روز ہوائی جہازوں سے لیبارٹری کے آس پاس سے ہوا کے نمونے لیے جارہے تھے جنکا تابکاری کے اثرات کے لیے مائنہ کیا جائیگا۔ اس تجربہ گاہ کو کم ازکم جمعرات تک بند کردیا گیا ہے۔

سوائے اس یقین دہانی کے کہ تجربہ گاہ کے حساس حصے محفوظ ہیں، حکام نے یہ نہیں بتایا کہ 58 مربع کلومیٹر پر پھیلی ہوئی اس تجربہ گاہ کو آگ کے شعلوں سے بچانے کے لیے کیا احتیاطی تدابیر کی جارہی ہیں۔ حکام نے امریکی میڈیا میں آنے والی ان اطلاعات پر تبصرہ نہیں کیا کہ اس تجربہ گاہ میں 20000 ٹن جوہری فضلہ محض کپڑے کی دیواروں سے بنے ہوئے ایک نسبتا کھلی عمارت میں موجود ہے۔

گیارہ سال پہلے بھی اس تجربہ گاہ کو جنگلی آگ سے نقصان پہنچا تھا، لیکن اسکے بعد اسے خطرات سے محفوظ رکھنے کے لیے کروڑوں ڈالر خرچ کیے گئے تھے۔

دو ارب ڈالر کے بجٹ سے چلنے والی یہ تجربہ گاہ نیو میکسیکو ریاست سے 55 کلو میٹر دور ہے اور اس میں 20000 لوگ کام کرتے ہیں۔ ان میں سے نصف کا تعلق حفاظتی ڈیوٹی سے ہے۔

اس عمارت میں کئی اہم ہتھیاروں کے ساتھ ساتھ قومی سلامتی سے متعلق معاملات پر بھی کام ہوتا ہے۔

XS
SM
MD
LG