رسائی کے لنکس

یوکرائن میں پرتشدد مظاہرے

یوکرائن کی وزارت صحت نے کہا ہے کہ حکومت مخالف مظاہرین اور پولیس کے درمیان ہونے والی جھڑپوں میں ہلاکتوں کی تعداد 25 ہو گئی ہے۔ دارالحکومت کیوو میں احتجاج کرنے والوں کے ایک مرکزی کیمپ پر لاٹھی چارج کے بعد بدھ کی صبح بھی دستی بم کے دھماکوں اور فائرنگ کی آوازیں سنی گئیں۔ ہلاک ہونے والوں میں سات پولیس اہلکار بھی شامل ہیں۔ پولیس اور حزب مخالف کے نمائندوں کے مطابق ہلاک ہونے والوں کی اکثریت کی موت گولیاں لگنے سے ہوئی جب کہ زخمی ہونے والے سینکڑوں افراد میں سے درجنوں کی حالت تشویشناک ہے۔
مزید

یوکرائن کی وزارت صحت نے کہا ہے کہ حکومت مخالف مظاہرین اور پولیس کے درمیان ہونے والی جھڑپوں میں ہلاکتوں کی تعداد 25 ہوگئی ہے۔
1

یوکرائن کی وزارت صحت نے کہا ہے کہ حکومت مخالف مظاہرین اور پولیس کے درمیان ہونے والی جھڑپوں میں ہلاکتوں کی تعداد 25 ہوگئی ہے۔

دارالحکومت کیوو میں احتجاج کرنے والوں کے ایک مرکزی کیمپ پر لاٹھی چارج کے بعد بدھ کی صبح بھی دستی بم کے دھماکوں اور فائرنگ کی آوازیں سنی گئیں۔
2

دارالحکومت کیوو میں احتجاج کرنے والوں کے ایک مرکزی کیمپ پر لاٹھی چارج کے بعد بدھ کی صبح بھی دستی بم کے دھماکوں اور فائرنگ کی آوازیں سنی گئیں۔

پولیس اور حزب مخالف کے نمائندوں کے مطابق ہلاک ہونے والوں کی اکثریت کی موت گولیاں لگنے سے ہوئی جب کہ زخمی ہونے والے سینکڑوں افراد میں سے درجنوں کی حالت تشویشناک ہے۔
3

پولیس اور حزب مخالف کے نمائندوں کے مطابق ہلاک ہونے والوں کی اکثریت کی موت گولیاں لگنے سے ہوئی جب کہ زخمی ہونے والے سینکڑوں افراد میں سے درجنوں کی حالت تشویشناک ہے۔

یوکرائن کے صدر وکٹر یانوکووچ نے  تشدد کے تازہ واقعے کی ذمہ داری حزب مخالف کے رہنماؤں پر عائد کرتے ہوئے کہا کہ مظاہرین کو حکومت مخالف مظاہروں میں ہتھیار لانے کے لیے زور دینے والے کارکنوں نے جمہوریت کے اصولوں کی خلاف ورزی کی اور انھیں اس کے نتائج بھگتنا ہوں گے۔
4

یوکرائن کے صدر وکٹر یانوکووچ نے  تشدد کے تازہ واقعے کی ذمہ داری حزب مخالف کے رہنماؤں پر عائد کرتے ہوئے کہا کہ مظاہرین کو حکومت مخالف مظاہروں میں ہتھیار لانے کے لیے زور دینے والے کارکنوں نے جمہوریت کے اصولوں کی خلاف ورزی کی اور انھیں اس کے نتائج بھگتنا ہوں گے۔

مزید لوڈ کریں

XS
SM
MD
LG