رسائی کے لنکس

چین: ایغور ماہر تعلیم کو عمر قید کی سزا


الہام توہتی (فائل فوٹو)

الہام توہتی (فائل فوٹو)

الہام توہتی چین کی طرف سے سنکیانگ کی ایغور مسلمان آباد ی سے روا رکھے جانے والے سلوک پر کھلی تنقید کرتے رہے ہیں۔

چین کی ایک عدالت نے علیحدگی کے الزامات کے تحت ایک معروف ایغور ماہر تعلیم کو عمر قید کی سزا سنائی ہے۔

الہام توہتی ایک تعلیمی ادارے میں معاشیات کے پروفیسر ہیں اور ان کے وکیل کا کہنا ہے کہ ان کو یہ سزا سنکیانگ کی ایک عدالت نے منگل کو سنائی۔

الہام توہتی چین کی طرف سے سنکیانگ کی ایغور مسلمان آبادی سے روا رکھے جانے والے سلوک پر کھلی تنقید کرتے رہے ہیں۔

چین میں شورش زدہ شمال مغربی خطے سنکیانگ میں بدامنی کی وجہ سےحالیہ مہینوں میں سینکڑوں افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

توہتی خود پر لگائے گئے ان الزامات کی سختی سے تردید کرتے ہیں کہ وہ ایک علیحدگی پسند گروپ کی قیادت کر رہے تھے۔ ان کے وکیل لی فینگ پنگ نے کہا کہ وہ اس سزا کے خلاف اپیل کریں گے۔

سنکیانگ کی آبادی کی اکثریت ایغور نسل کے مسلمانوں پر مشتمل ہے جس کا کہنا ہے کہ اسے چینی حکومت کی طرف سے مبینہ طور پر ریاستی جبر اور امتیازی سلوک کا سامنا ہے۔ دوسری طرف چینی حکومت ان الزمات کو مسترد کرتی ہے۔

XS
SM
MD
LG