رسائی کے لنکس

عراق میں بم دھماکہ، 70 سے زیادہ افراد ہلاک


عراقی شہر کربلا میں حضرت امام حسین کے چہلم کا جلوس۔ 20 نومبر 2016

عراقی شہر کربلا میں حضرت امام حسین کے چہلم کا جلوس۔ 20 نومبر 2016

عراق کے دارالحکومت بغداد کے جنوب میں جمعرات کے روز دهشت گر گروپ اسلامک اسٹیٹ کے ایک خودکش ٹرک بمبار کے حملے میں کم از کم 70 افراد ہلاک ہو گئے۔ دھماکے کا نشانہ بننے والے زیادہ تر افراد ایرانی کے زائرین تھے جو عراقی شہر کربلا میں شیعوں کی ایک مذہبی تقریب میں شرکت کے لیے آئے تھے۔

حکام نے بتایا کہ حملے کے وقت مسافروں سے بھری ہو ئی کئی بسیں حلہ نامی قصبے کے ایک پٹرول پمپ پر کھڑی تھیں۔ دھماکے سے ان میں آگ بھڑک اٹھی۔

فرانسیسی خبررساں ادارے نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ حملے کے وقت وہاں کحری ہوئی بسوں کی تعداد کم از کم سات تھی۔

زائرین حضرت امام حسین کے چہلم میں شرکت کے لیے کربلا گئے تھے۔

رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ زائرین کے آمد کے موقع پر اسلامک اسٹیٹ کی جانب سے دهشت گردی کے امکان کے پیش نظر عراقی سیکیورٹی فورسز کو انتہائی چوکس کر دیا گیا تھا۔

یہ حملہ ایک ایسے وقت ہوا ہے جب عراقی فورسز، اسلامک اسٹیٹ سے اہم شہر موصل کا قبضہ واپس لینے کے لیے جنگ کررہی ہیں۔

موصل 17 اکتوبر سے سرکاری فورسز کے محاصرے میں ہے جو اسلامک اسٹیٹ کے جنگجوؤں کو شہر سے باہر دھکیلنے کی کوشش کررہی ہیں ۔

اسلامک اسٹیٹ دو سال سے زیادہ عرصے سے شہر اور اس سے ملحقہ علاقوں پر قابض ہے۔

جب سے عراقی فورسز نے ملک کے اس مشرقی شہر کے مضافاتی علاقوں سے اسلامک اسٹیٹ کے جنگجوؤں کا صفایا شروع کیا ہے، خیال ہے کہ ہزاروں افراد شہر میں پھنسے ہوئے ہیں۔

تبصرے دکھائیں

XS
SM
MD
LG