رسائی کے لنکس

logo-print

شام کی حزب اختلاف نے سیاسی تبدیلی کا معاہدہ مسترد کردیا


اطلاعات کے مطابق ہفتے کے روز دارالحکومت دمشق میں جنازے کے ایک جلوس میں طاقت ور بم دھماکے سے کم ازکم 30 افراد ہلاک ہوگئے

شام کے حزب اختلاف کے گروپوں نے ملک میں سیاسی تبدیلی کے اقوام متحدہ کے حمایت یافتہ منصوبے کو مبہم اور ڈھونگ قراردیتے ہوئے مسترد کیا ہے اور کہا ہے کہ صدربشارالاسد کے ساتھ اقتدار میں شراکت ناقابل قبول ہے۔

پیرس میں قائم سیرین نیشنل کونسل کے ترجمان بسمہ کودمانی نے اتوار کے روز کہاکہ شام کے شہری ایک ایسے وقت میں جب کہ ملک میں ہلاکتوں کاسلسلہ جاری ہے کسی سیاسی عمل میں شریک نہیں ہوں گے۔

اطلاعات کے مطابق ہفتے کے روز دارالحکومت دمشق میں جنازے کے ایک جلوس میں طاقت ور بم دھماکے سے کم ازکم 30 افراد ہلاک ہوگئے۔

سرگرم کارکنوں نے دھماکے کاالزام سیکیورٹی فورسز پر لگایا ہے۔

ادھر جنیوا میں ہفتے کو منعقد ہونے والی ایک بین الاقوامی کانفرنس نے عبوری حکومت کی تشکیل سے متعلق مسٹر کوفی عنان کے منصوبے کو قبول کرلیا۔ لیکن روس کے اصرار پر عبوری حکومت کی تشکیل سے متعلق معاہدے میں مسٹر اسد کے لیے دروازہ کھلا رکھا گیا ہے۔

سیرین نیشنل کونسل کے ایک سینئر عہدے دار برہان غلیون نے العربیہ ٹیلی ویژن سے گفتگو کرتے ہوئے کہ شام پر مذاکرات کے آغاز کے بعد سے یہ سے برا بین الاقوامی بیان ہے۔
XS
SM
MD
LG