رسائی کے لنکس

logo-print

امریکی ارکانِ کانگریس نے کشمیر کو دنیا کا خطرناک ترین خطہ قرار دے دیا


ایلس ویلز (فائل)

امریکی کانگریس کے بعض ارکان نے بھارت کے زیرِ انتظام کشمیر میں انسانی حقوق کی صورت حال پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے اسے دنیا کا خطرناک ترین خطہ قرار دیا ہے۔

جنوبی ایشیا میں انسانی حقوق کی صورت حال پر منگل کو کانگریس کی ذیلی کمیٹی میں سماعت کے دوران امریکی حکومت سے پوچھا گیا کہ وہ کشمیر میں حالات معمول پر لانے کے لیے کیا اقدامات کر رہی ہے۔

کمیٹی کے چیئرمین بریڈ شرمین نے کہا کہ ’’امریکی سفارت کاروں کو بھارت کے زیرِ انتظام کشمیر جانے سے روکا گیا جس کی وجہ سے ہم آزاد ذرائع سے کشمیر کی صورت حال جاننے سے قاصر ہیں۔"

انہوں نے سوال کیا کہ ’امریکہ کی کشمیر کے بارے میں پالیسی کیا ہے؟‘

اس موقع پر ارکان کانگریس نے بتایا کہ ’’امریکہ میں مقیم کشمیری کمیونٹی نے انہیں بتایا ہے کہ کشمیر میں ان کا اپنے اہل خانہ سے کوئی رابطہ نہیں رہا اور انہیں نہیں معلوم کہ وہ کس حال میں ہیں۔"

سماعت میں بتایا گیا کہ پابندیوں کے دوران بھارتی میڈیا کو مبینہ طور پر دھمکیاں دی جا رہی ہیں کہ اگر انہوں نے بھارتی زیر انتظام کشمیر کی صورت حال پر خبریں جاری کیں تو ان کی فنڈنگ روک دی جائے گی۔ کمیٹی کو بتایا گیا کہ دباؤ کے ان مبینہ اقدامات کے نتیجے میں کشمیر کی حقیقی صورت حال دنیا کے سامنے نہیں آ پا رہی۔

بھارتی کشمیر کے دارالحکومت سری نگر میں فوجی کارروائی۔ فائل فوٹو
بھارتی کشمیر کے دارالحکومت سری نگر میں فوجی کارروائی۔ فائل فوٹو

خاتون رکن کانگریس شیلا جیکسن لی نے سوال کیا کہ ’’دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کے کتنے فوجی ہلاک ہوئے اور اس جنگ میں امریکہ کیا کردار ادا کر رہا ہے؟ اور کشمیر میں آٹھ لاکھ بھارتی فوجی کیوں تعینات ہیں؟ گویا وہاں ہر آٹھ شہری پر ایک فوجی کی نگرانی ہے۔

معاون امریکی وزیر خارجہ برائے جنوبی ایشیا، ایلس ویلز نے جواب میں بتایا کہ "بھارت سمجھتا ہے کہ اسے کشمیر میں غیر ریاستی دہشت گردوں سے خطرہ ہے، جو لائن آف کنٹرول پار کر سکتے ہیں، جس کے باعث اتنی بڑی تعداد میں کشمیر میں فوجیوں کی تعیناتی ضروری ہے۔"

ان سے سوال کیا گیا کہ وہ غیر ریاستی عناصر کون ہیں، تو انہوں نے کہا کہ یہ عناصر جیش محمد، لشکر طیبہ اور حزب المجاہدین ہیں۔

انہوں نے کہا کہ جب وزیر اعظم عمران خان امریکہ کے دورے پر آئے تھے تو ان سے کہا گیا تھا کہ ان لوگوں کو روکا جائے جس پر اُن کے بقول، وزیرِ اعظم عمران خان نے حوصلہ افزا جواب دیا تھا اور کہا تھا کہ کسی بھی دہشت گرد کو لائن آف کنٹرول پار کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

ایلس ویلز کے بقول، امریکہ نے دیکھا کہ اس کے بعد لائن آف کنٹرول پار کرنے کا کوئی واقعہ پیش نہیں آیا۔

ایلس ویلز نے کہا کہ ’’امریکہ چاہتا ہے کہ دونوں ممالک (پاکستان اور بھارت) شملہ معاہدے کے تحت بات چیت سے اس مسئلے کو حل کریں۔ امریکہ دونوں ممالک کے درمیان تعمیری مذاکرات کے حق میں ہے۔‘‘

اس موقع پر رکن کانگریس الہان عمر نے سوال کیا کہ کشمیر کے مسئلے پر امریکی حکومت کیا کر رہی ہے؟ انھوں نے کہا کہ ’ہمارے علم میں ہے کہ وہاں 4000 کشمیری نوجوان گرفتار ہیں‘۔ جواب میں، ایلس ویلز نے کہا کہ کشمیر کے مسئلے پر بھارتی حکومت سے بات ہوئی ہے۔ امریکہ کشمیر کے مسئلے کا قریب سے جائزہ لے رہا ہے اور وہاں کی صورت حال کے پیش نظر امریکی شہریوں کو کشمیر جانے سے روک دیا گیا ہے۔

سماعت کے دوران بھارتی نژاد امریکی سینیٹر، جیہ پال نے کہا کہ ’بھارت اب دنیا کی بڑی جمہوریت نہیں رہا۔ وہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزی کر رہا ہے۔ وہاں اس وقت بیماروں کو بھی اجازت نہیں کہ وہ علاج کے لیے سفر کر سکیں۔'

امریکی کانگریس میں امور خارجہ کی ذیلی کمیٹی کی جانب سے ہونے والی اس سماعت کے دو سیشن ہوئے۔ صبح کی نشست میں امریکی وزارت خارجہ کے حکام کے علاوہ ’ہیومن رائٹس کمیشن‘ اور ’ایمنسٹی انٹر نیشنل‘ کے اہلکار پیش ہوئے۔

اس موقع پر معاون وزیر خارجہ برائے جنوبی و وسطی ایشیا، ایلس ویلز مدعو تھیں۔ دوسری نشست میں بھارت کے زیر انتظام کشمیر کے متاثرین پیش ہوئے جنھوں نے کمیٹی ارکان کو صورت حال سے آگاہ کیا۔

اس خصوصی سماعت کے دوران، امریکہ میں قائم ’کشمیر ہیومن رائٹس فاؤنڈیشن‘ کے ارکان نے کانگریس سے رابطہ کار کے طور پر کام کیا۔ فاؤنڈیشن کے سربراہ اور کیلی فورنیا سے تعلق رکھنے والے ڈیمو کریٹ رہنما ڈاکٹر آصف محمود نے بتایا کہ انہوں نے کشمیر کی صورت حال پر اپ ڈیٹ حاصل کر لی ہیں۔

واشنگٹن میں تعینات معروف بھارتی صحافی، للیت جھا نے بتایا کہ ’’یہ سماعت صرف کشمیر پر نہیں بلکہ پورے جنوبی ایشیا کی صورت حال پر ہے۔ اس میں کشمیر پر بھی فوکس ہوگا۔ لیکن، بلوچستان، سندھ ، نیپال، سری لنکا اور روہنگیا مسلمانوں کی صورت حال پر بھی بات ہوگی۔‘‘

XS
SM
MD
LG