رسائی کے لنکس

logo-print

تحقیق سے معلوم ہوا ہے کہ بہت زیادہ فربہ افراد جو اپنے قد اور عام وزن سے اوسطاً 100 پاؤنڈ یا 45 کلو زیادہ ہوتے ہیں، ایک عام صحتمند انسان کی بنسبت ساڑھے چھ سے 13 سال کم جیتے ہیں

ایک نئی تحقیق بتاتی ہے کہ شدید موٹاپے سے انسانی زندگی کو شدید خطرات لاحق ہو سکتے ہیں اور انسان وقت سے کہیں پہلے موت کے منہ میں جا سکتا ہے۔

تحقیق کے مطابق، موٹاپا تمباکو نوشی سے زیادہ مہلک ثابت ہو سکتا ہے اور ایک فربہ شخص میں تمباکو نوش کی نسبت جلد مرنے کا امکان زیادہ ہوتا ہے۔

یہ تحقیق طبی جریدے ’پی لوس میڈیسین‘ میں شائع ہوئی۔ اس تحقیق میں شدید موٹاپے اور شرح ِاموات پر تحقیق کی گئی۔

تحقیق سے معلوم ہوا کہ بہت زیادہ فربہ افراد جو اپنے قد اور عام رواجی وزن سے اوسطاً 100 پاؤنڈ یا 45 کلو زیادہ وزن رکھتے ہیں، ایک عام صحتمند انسان کی بنسبت ساڑھے چھ سے 13 سال کم جیتے ہیں۔

اس تحقیق کے لیے امریکہ، سوئیڈن اور آسٹریلیا میں فربہ افراد کا ڈیٹا اکٹھا کیا گیا۔ معلوم ہوا کہ دنیا بھر میں تقریباً 30فی صد یا 2.1 ارب افراد موٹاپے کا شکار ہیں۔

تحقیق میں تقریباً 9500 ایسے افراد کو شامل کیا گیا جو شدید موٹاپے کا شکار تھے، جبکہ تقریباً تین لاکھ ایسے افراد کو بھی شامل کیا گیا جن کا وزن نارمل تھا۔ ان دونوں گروپوں کے وزن اور ان کو لاحق طبی مسائل کا جائزہ لیا گیا۔

پتہ چلا کہ بہت فربہ افراد میں مختلف بیماریوں جیسا کہ دل کے امراض، سرطان اور ذیابیطس کے مرض سے مرنے کی شرح اور امکانات نارمل وزن کے حامل افراد کی نسبت کہیں زیادہ تھی۔

امریکی ادارہ برائے صحت کے اعداد و شمار کے مطابق، امریکہ بھر میں تقریباً 36 فی صدافراد موٹاپے کا شکار ہیں۔

XS
SM
MD
LG