رسائی کے لنکس

logo-print

بلیک بیری کوبھارت میں آئندہ ہفتے سے پابندی کا سامنا


ہندوستان کی حکومت نے کہا ہے کہ اگر بلیک بیری بنانے والی کمپنی کی جانب سے ملک کی سیکیورٹی ایجنسیز کو آئندہ ہفتے تک اپنے ڈیٹا تک رسائی نہ دی گئی تو آئندہ ہفتے سے ملک بھر میں بلیک بیری موبائلز کی ای میل اور میسجنگ سروسز پہ پابندی عائد کردی جائے گی۔

مواصلات کےوزیرِ مملکت سچن پائلٹ نے جمعرات کے روزنئی دہلی میں صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ مجوزہ پابندی اس وقت تک برقرار رہے گی جب تک کمپنی کی جانب سے حکومتی مطالبہ کا مثبت جواب سامنے نہیں آجاتا۔ ہندوستانی حکام کو خدشہ ہے کہ دہشت گرد بلیک بیریز کی ای میل اور میسجنگ کی سروسز اپنے مذموم مقاصد کے لیے استعمال کرسکتے ہیں کیونکہ حکام کے لیے بلیک بیری فونز کے ذریعے بھیجے گئے پیغامات کی نگرانی اور انہیں انٹرسیپٹ کرنا ممکن نہیں۔

ہندوستانی وزیر کا بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب بلیک بیری بنانے والی کینیڈین کمپنی "ریسرچ ان موشن" کے ذمہ داران ہندوستانی حکام کے ساتھ مسئلے کے حل کے لیے مذاکرات میں مصروف ہیں۔

رواں ماہ کے آغاز میں ہندوستانی وزارتِ داخلہ کی جانب سے یہ اعلان کیا گیا تھا کہ اگر بلیک بیری بنانے والی کمپنی نے سیکیورٹی اداروں کو فونز کے ای میل اور انسٹنٹ میسیجنگ سروسز تک رسائی نہ دی تو ان دونوں سروسز پر 31 اگست سے ہندوستان بھر میں پابندی عائد کردی جائے گی۔

حکام کی جانب سے پابندی کے حوالے سے باقاعدہ اعلان پیر کو متوقع ہے۔ اگر مذکورہ پابندی عائد کردی گئی تو بلیک بیری کے صارفین اپنے موبائلز صرف کال کرنے اور انٹرنیٹ برائوزنگ کے لیے ہی استعمال کرسکیں گے۔

XS
SM
MD
LG