رسائی کے لنکس

logo-print

افغان این ایس اے نے کلبھوشن کے بدلے آرمی پبلک اسکول حملے کے ماسٹر مائنڈ کا تبادلہ کرنے کو کہا تھا


اقوام متحدہ میں پاکستان کی مستقل مندوب ڈاکٹر ملیحہ لودھی کی طرف سے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں غلطی سے ایک فلسطینی لڑکی کی تصویر کو کشمیری لڑکی کی تصویر ظاہر کرنے کی سفارتی غلطی کو محض چند روز ہی ہوئے تھے کہ پاکستانی وزیر خارجہ خواجہ آصف نے ایشیا سوسائٹی کی ایک تقریب میں انکشاف کیا کہ افغانستان کے قومی سلامتی کے مشیر نے ایک ملاقات میں اُنہیں پیشکش کی ہے کہ وہ کلبھوشن یادو کو افغانستان کے حوالے کرنے کے بدلے پاکستان کو مطلوب اُس دہشت گرد کو حوالے کر سکتا ہے جو پشاور کے آرمی پبلک اسکول پر حملے کا سرغنا تھا۔ خواجہ آصف کے اس بیان نے ایک نئے سفارتی تنازعے کو جنم دے دیا ہے۔

افغانستان نے کسی بھی ایسی پیشکش کی سختی سے تردید کی ہے۔ افغانستان کے قومی سلامتی کے مشیر حنیف اتمار کے دفتر سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ حنیف اتمار اور خواجہ آصف کے درمیان ملاقات کے دوران مبینہ قیدیوں کے تبادلے کے حوالے سے قطعاً کوئی بات چیت نہیں ہوئی ہے۔

خواجہ آصف کے اس بیان سے پاکستان، بھارت اور افغانستان میں ایک کھلبلی مچ گئی اور اس حوالے سے طرح طرح سے سوال کھڑے ہو گئے۔

امریکہ میں مقیم جیو پولیٹکل تجزیہ کار اور کتاب افغانستان: سرد جنگ سے سونے کی جنگ تک کے مصنف ڈاکٹر آسم یوسف زئی نے ایک خصوصی گفتگو میں ہمیں بتایا کہ اُنہیں یقین نہیں ہے کہ اس طرح کی کوئی بات چیت ہوئی ہے۔ اُنہوں نے اس سلسلے میں افغان اور بھارتی حکومتوں کی طرف سے جاری ہونے والی تردید کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ چونکہ ایسی کسی بات چیت کا نہ تو کوئی ریکارڈ سامنے آیا ہے اور نہ ہی اس کی کوئی تفصیل موجود ہے، لہذا ایسا بیان مکمل طور پر من گھڑت ہے۔ ڈاکٹر آسم یوسف زئی نے کہا کہ اگر کوئی ایسی بات چیت ہوئی بھی ہے تو بھی یہ مناسب نہیں تھا کہ خواجہ آصف ایشیا سوسائیٹی کے پلیٹ فام کو استعمال کرتے ہوئے ایسی بات کریں۔ اس سے یہ تاثر ملتا ہے کہ خواجہ آصف نے یہ بات شاید امریکی حلقوں کو کوئی پیغام پہنچانے کیلئے کہی کیونکہ صدر ٹرمپ نے اپنے حالیہ بیان میں کہا تھا کہ دہشت گردی کو ختم کرنے کیلئے پاکستان کو مزید کام کرنے کی ضرورت ہے۔ اس کے علاوہ بین الاقوامی عدالت انصاف نے کلبشن یادو کی سزائے موت کو معطل کر دیا تھا اور عدالت کے اس فیصلے کو پاکستانی حلقوں کی جانب سے پسندیدگی کی نظر سے نہیں دیکھا گیا۔ ڈاکٹر یوسف زئی کے مطابق ان تمام واقعات کی کڑیاں ایک دوسرے سے ملتی ہیں۔

پاکستان کے ممتاز دفاعی تجزیہ کار جنرل ریٹائرڈ طلعت مسعود نے ہمیں بتایا کہ اس انداز کے تبادلے مناسب نہیں ہوتے۔ اس تبادلے کی مبینہ پیشکش سے یہ بھرپور تاثر ملتا ہے کہ بھارت افغانستان کو پراکسی کے طور پر استعمال کر رہا ہے۔جنرل طلعت مسعود کا خیال ہے کہ کسی دوسرے ملک کو پراکسی کے طور پر استعمال کرنے کے بجائے بھارت اور پاکستان کو اپنے تعلقات میں دوطرفہ انداز اختیار کرنا چاہئیے اور اسی طرح پاکستان اور افغانستان کو بھی اپنے اختلافات باہمی رابطوں کے ذریعے ہی طے کرنے چاہئیں۔

اگرچہ خواجہ آصف کی طرف سامنے آنے والی اس گفتگو پر بہت سے حلقے حیرت کا اظہار کر رہے ہی، جنرل طلعت مسعود کہتے ہیں کہ اس خطے میں ہر انداز کے بیان سامنے آ سکتے ہیں لیکن پاکستانی وزیر خارجہ کو ایک امریکی تھنک ٹینک کے فورم میں ایسی بات نہیں کہنی چاہئیے تھی۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG