رسائی کے لنکس

logo-print

غور پولیس نے گزشتہ روز ایک آپریشن کے دوارن داعش کے ایک کمانڈر کو ہلاک کر دیا تھا جس کا بدلہ لینے کے لیے عسکریت پسندوں نے شہریوں کو اغوا کر لیا تھا

افغانستان کے وسطیٰ صوبے غور کےحکام نے کہا ہے کہ شدت پسند گروپ داعش کے مشتبہ عسکریت پسندوں نے کم ازکم ان 30 عام افغان شہریوں کو ہلاک کر دیا ہے جنہیں صوبے کے ایک دور افتادہ علاقے سے گزشتہ روز اغوا کیا گیا تھا۔

غور کی صوبائی حکومت کے ترجمان عبدل حئی خطیبی نے کہا کہ "غور پولیس نے گزشتہ روز ایک آپریشن کے دوارن داعش کے ایک کمانڈر کو ہلاک کر دیا تھا اور اس کی ہلاکت کے بدلے میں داعش کے عسکریت پسندوں نے صوبائی دارالحکومت کے قریب سے عام شہریوں کو اغو کر نے کے بعد انہیں قتل کر دیا ہے۔"

انہوں نے مزید کہا کہ اغوا کا یہ واقعہ منگل کی رات دیر گئے صوبائی دارالحکومت فیروز کوہ کے قریب پیش آیا۔ اس علاقے کے قریب ہی افغان سکیورٹی فورسز طالبان عسکریت پسندوں کے خلاف برسر پیکار تھیں۔

حالیہ مہینوں میں افغانستان میں طالبان عسکریت پسندوں کی کارروائیوں میں بھی اضافہ ہوا ہے جس میں نہ صرف سکیورٹی فورسز بلکہ عام شہریوں کو بھی نشانہ بنایا جارہا ہے۔

آپ کی رائے

تبصرے دکھائیں

XS
SM
MD
LG