رسائی کے لنکس

logo-print

پاکستان تحریک انصاف کا ہندی میں ٹویٹ


پاکستان تحریک انصاف نے گزشتہ روز وزیرِ اعظم عمران خان کے ایک ٹویٹ کو ہندی زبان میں ترجمہ کر کے ٹویٹ کیا جس میں وزیراعظم عمران خان کی جانب سے کہا گیا تھا کہ ’میں امن کے نوبل انعام کا حقدار نہیں۔ نوبل انعام کا مستحق وہ شخص ہوگا جو کشمیری عوام کی امنگوں کی روشنی میں تنازع کشمیر کاحل تلاش کرے گا اور برصغیر میں امن و انسانی ترقی کی راہ ہموار کرے گا۔‘

پی ٹی آئی کی سوشل میڈیا ٹیم کے ایک رکن احسن علاوی نے وائس آف امریکہ سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’اس ٹوئٹ کا مقصد بھارتی عوام تک خود انہی کی زبان میں پیغام دیناتھا۔ یہ پیغام اس تناظر میں دیا گیا ہے جس میں بھارت کے ساتھ کشیدگی کم کرنے کے لیے سوشل میڈیا پر وزیراعظم عمران خان کو امن کا نوبیل انعام دینے پر بحث چھڑی ہوئی ہے۔ ‘

احسن علاوی نے مزید بتایا ’یہ ہماری پوری میڈیا ٹیم کا آئیڈیا تھا کہ ہندی میں ٹویٹ کیا جائے تاکہ بھارت کے ایک عام آدمی تک اسی کی زبان میں اپنی بات پہنچائی جائے کیوں کہ اس میں وزیراعظم نے کشمیر میں قیام امن کے لئے کام کرنے والے شخص کو امن انعام دینے کی بات کی تھی اور یہ بہت اہم پیغام تھا لہذا ہم نے اسے اردو ہندی اور انگریزی تینوں زبانوں میں ٹوئٹ کیا۔ یہ تینوں زبانیں بھارت میں بھی بولی اور سمجھی جاتی ہیں۔ ‘

سوشل میڈیا پر دوسری زبانوں میں پیغام دینے کا رجحان تیزی سے آگے بڑھ رہا ہے۔ دنیا کے متعدد رہنما سوشل میڈیا کی اہمیت اور عوام تک اس کی براہ راست رسائی کی وجہ سے مختلف مقامی زبانوں میں اپنے پیغامات دینے لگے ہیں۔ پیغام کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کی غرض سےدوسری زبانوں میں ترجمہ کیا جانے لگا ہے۔

گزشتہ دنوں امارات کے ڈپٹی سپریم کمانڈر محمد بن زاید نے اردو اور ہندی میں پاک بھارت کشیدگی ختم کرنے کا پیغام دیا تھا۔

قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف شہباز شریف نے بھی پاکستان کا ساتھ دینے پرترک صدر اور عوام کا ترکی زبان میں شکریہ ادا کیا تھا۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG