رسائی کے لنکس

logo-print

افغانستان کا جشنِ آزادی پشاور میں


پشاور میں افغان نوجوان اپنے ملک کا یوم آزادی منا رہے ہیں

نوجوانوں نے اپنے ملک سے اظہارِ محبت کی خاطر نعرے لگاائے اور افغانستان کے روایتی ڈانس بھی کیے۔

خیبر پختونخوا کے مرکزی شہر پشاور میں رہائش پزیر افغانستان کے نوجوانوں اور بالخصوص طلبہ نے ہفتے اور اتوار کے درمیانی شب افغانستان کے یوم آزادی کے سلسلے میں جشن منایا۔

پشاور کے علاقے حیات آباد کے فلائی اوور پر منظم انداز میں درجنوں افغان نوجوان افغانستان کے قومی پرچم لہراتے ہوئے نمودار ہوئے۔ نوجوانوں نے اپنے ملک سے اظہارِ محبت کی خاطر نعرے لگاائے اور افغانستان کے روایتی ڈانس بھی کیے۔

اس موقع پر بعض نوجوانوں نے لر اوبر یو افغان یعنی افغانستان اور پاکستان میں رہائش پزیر پشتون ایک کے نعرے بھی لگائے ۔

ایک نوجوان نے وائس آف امریکہ کو بتایا کہ وہ اپنے ملک کا یوم آزادی انتہائی خوشی سے منا رہے ہیں اور تمام دوست آج جمع ہو کر خوشی کا اظہار کر رہے ہیں۔

افغان نوجوانوں کے جمع ہونے سے حیات آباد فلائی اوور، جسے باب پشاور بھی کہا جاتا ہے، پر آمدورفت میں خلل پڑ گیا اور اس موقع پر بعض پولیس اہلکاروں نے افغان نوجوانوں پر معمولی لاٹھی چارج بھی کیا۔ تاہم نوجوان فلائی اوور سے ملحقہ ایک میدان میں جمع ہو گئے جہاں اُنہوں نے پختونوں کے روایتی ڈانس اتن کا بھی مظاہرہ کیا ۔

پشاور ہائی کورٹ کے سابق جج شیر محمد خان نے وائس آف امریکہ کے ساتھ بات چیت میں کہا کہ افغانستان کے باشندے جہاں بھی ہوں، اُنہیں ملک کی آزادی کے سلسلے میں اظہار کا حق حاصل ہے ۔

اُنہوں نے کہا کہ اس قسم کی تقریبات سے دونوں ممالک کے درمیان تعلقات بہتر بھی بنائے جا سکتے ہیں ۔

ادھر پاکستان اور افغانستان کے درمیان معروف ترین گزرگاہ طورخم میں تعنیات پاکستان کے سیکورٹی حکام نے اپنے افغان ہم منصبوں کو افغانستان کے یوم آزادی کے موقع پر پھولوں اور مٹھائی کا تحفہ پیش کیا۔

ماضی میں کبھی بھی افغانستان کے باشندوں نے پاکستان میں اس طرح اپنے ملک کے یوم آزادی کو برسرعام نہیں منایا تھا۔ ماضی میں پاکستان میں افغان باشندوں کی آبادی پچاس لاکھ سے بھی زیادہ تھی۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG