رسائی کے لنکس

logo-print

ایڈز کے خلاف جنگ انسانی حقوق کی آواز کا درجہ رکھتی ہے


ایڈز کے خلاف جنگ انسانی حقوق کی آواز کا درجہ رکھتی ہے

بدھ کو نیو یارک میں ایچ آئی وی ایڈز پر سہ روزہ اعلٰی سطحی کانفرنس کا آغاز ہوا جس میں دنیا بھر سے تین ہزار سے زائد افراد شرکت کر رہے ہیں

بدھ سے اقوام متحدہ میں ایچ آئی وی ایڈز پر تین روزہ اعلٰی سطحی کانفرنس کا آغاز ہوا جِس میں30 سے زائد سربراہان مملکت سمیت دنیا بھر سے تین ہزار سے زائد افراد شرکت کر رہے ہیں۔

ایڈز کے خلاف جنگ کا اصل مطلب بیان کرتے ہوئے سیکرٹری جنرل بان کی مون نے کہا کہ یہ پیغام انسانی حقوق کے لیے آواز بلند کرنا تھا۔ اُن کے الفاظ میں، ’ یہ انسانی حقوق کےلیے اٹھنے والی آواز تھی، وہ مردوزن کی برابری کا مطالبہ تھا، وہ جنسی رجحانات کی بنیاد پر تعصب کے خاتمے کی جنگ تھی، اور وہ تمام انسانوں کے ساتھ ایک سا برتاؤ کرنے کا مطالبہ تھا‘۔

ایچ آئی وی ایڈز کو دریافت ہوئے تیس سال گزر چکے ہیں اور اِس عرصے میں اِس مرض سے ڈھائی کروڑ افراد ہلاک اور ڈیڑھ کروڑ سے زائد بچے یتیم ہو چکے ہیں۔ اقوام متحدہ کے مطابق اِس مرض کے اثرات سب سے زیادہ ان معاشروں میں واضح ہیں جو پہلے ہی غربت و افلاس کا شکار ہیں۔

دس سال قبل یعنی 2001ءمیں اقوام متحدہ نے ایڈز پر ایک خصوصی اجلاس بلایا تھا جس میں اس وبا کے مقابلے کے لیے عالمی سطح پر تعاون کا فیصلہ کیا گیا تھا۔

موجودہ اجلاس میں ماضی کی کارکردگی کا جائزہ لے کر مستقبل کی ضروریات کا اندازہ لگانے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ توقع ہے کہ اس تین روزہ کانفرنس کے اختتام پر ایک مشترکہ اعلامیہ جاری کیا جائے گا جس میں ایڈز کے خاتمے کے لیے موجودہ سمجھوتوں کا اعادہ کرتے ہوئے مستقبل کے لائحہ عمل کا اعلان کیا جائے گا۔

XS
SM
MD
LG