رسائی کے لنکس

logo-print

روس: دھماکے کے 35 گھنٹوں بعد ملبے سے گیارہ ماہ کا بچہ زندہ برآمد


امدادی کارکن گیارہ ماہ کے ایک بچے کو اٹھائے ہوئے ہیں جسے ایک رہائشی عمارت کے گرنے کے 35 گھنٹوں کے بعد ملبے کے ڈھیر میں زندہ حالت میں نکالا گیا جب کہ درجہ حرارت صفر سے کئی درجے نیچے تھا۔ یکم جنوری 2019

روس کے ایک شہر میں گیارہ ماہ کے ایک بچے کو شدید سردی میں ملبے کے ڈھیر میں 35 گھنٹوں تک دبا رہنے کے بعد زندہ نکال لیا گیا۔

ہنگامی مدد کرنے والے ادارے نے اس واقعہ کو ایک معجزہ قرار دیا ہے۔

روس کے ایک صنعتی شہر منگ نیٹوگورسک میں پیر کے روز ایک دس منزلہ اپارٹمنٹ عمارت میں زور دار دھماکہ ہوا جس سے عمارت کے 48 اپارٹمنٹس کو نقصان پہنچا۔

ایمرجینسی ورکرز اپارٹمنٹ بلڈنگ کے تباہ ہونے والے حصے میں امدادی کارروائیاں کر رہے ہیں۔ 31 دسمبر 2018
ایمرجینسی ورکرز اپارٹمنٹ بلڈنگ کے تباہ ہونے والے حصے میں امدادی کارروائیاں کر رہے ہیں۔ 31 دسمبر 2018

دھماکے کے نتیجے میں کم ازکم 7 افراد ہلاک اور 36 زخمی ہوئے اور کئی لوگ ملبے میں دب گئے جن میں گیارہ ماہ کا ایک بچہ بھی شامل تھا جس کی تلاش جاری تھی۔

امدادی سرگرمیوں کے دوران ایمرجینسی ورکز کو ملبے کی کھدائی کے دوران بچہ زندہ حالت میں مل گیا۔

نقطہ انجماد سے کئی درجے نیچے کھلی فضا میں 35 گھنٹوں تک ایک نوزائیدہ بچے کے زندہ رہنے کو ایمرجینسی اہل کاروں نے ایک معجزہ قرار دیا ہے۔

اپارٹمنٹ بلڈنگ میں دھماکے کا سبب گیس کا اخراج بتایا گیا ہے۔ تحقیقات جاری ہیں۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG