رسائی کے لنکس

logo-print

ہیلری کا کانگریس میں پارٹی کے زیادہ قانون ساز منتخب کرانے پر زور


کلنٹن نے اخباری نمائندوں کو بتایا کہ 8 نومبر میں 16 دِن باقی رہ گئے ہیں اور اب وہ بیلٹ پیپر میں شامل ڈیموکریٹس کو منتخب کرانے کا کام کریں گی، تاکہ کانگریس پر کنٹرول حاصل کرنے کی کوششں کرسکیں، جس کے دونوں ایوانوں میں ری پبلیکنز کی اکثریت ہے

ڈیموکریٹک پارٹی سے تعلق رکھنے والی ہیلری کلنٹن اگلے ماہ ہونے والے صدارتی انتخاب میں کامیابی کے لیے پُراعتماد نظر آتی ہیں۔ یوں لگتا ہے کہ اب وہ ری پبلیکن پارٹی کے مدِ مقابل امیدوار ڈونالڈ ٹرمپ سے پریشان نہیں۔

اُنھوں نے اب اپنی نئی کوششیں شروع کردی ہیں کہ قانون سازی کے ایجنڈے کی حمایت کے لیے کانگریس میں زیادہ سے زیادہ قانون ساز منتخب کرا سکیں۔

کلنٹن نے ٹرمپ کے اِن الزامات کو مسترد کیا ہے کہ وہ بدعنوان ہیں اور وائٹ ہائوس کے عہدے کے لیے موزوں نہیں۔ اُنھوں نے کہا کہ ''اب میں سوچتی ہوں کی اُن کے الزمات کا جواب دینے کی کوئی ضرورت نہیں''۔

سابق امریکی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ وہ ملک کی پہلی خاتون صدر بننے کی خواہشمند ہیں۔ اُنھوں نے ہفتے کی شام گئے اپنے طیارے پر سفر کرنے والے اخباری نمائندوں کو بتایا کہ 8 نومبر میں 16 دِن باقی رہ گئے ہیں اور اب وہ بیلٹ پیپر میں شامل ڈیموکریٹس کو منتخب کرانے کا کام کریں گی، تاکہ کانگریس پر کنٹرول حاصل کیا جا سکے، جس کے دونوں ایوانوں میں ری پبلیکنز کی اکثریت ہے۔

پولنگ سے واسطہ رکھنے والے تجزیہ کار اب کلنٹن کی جیت کا 9 سے 10 فی صد امکان بتاتے ہیں، جنھوں نے اُن ریاستوں پر توجہ دینا شروع کر دی ہے جہاں ری پبلیکن صدارتی امیدوار جیتا کرتے ہیں، تاکہ وہ ٹرمپ پر سبقت میں مزید بہتری لا سکیں، اور ڈیموکریٹک پارٹی کے اپنی قانون ساز ساتھیوں کو جتوا سکیں۔

تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ اُن کی کوشش یہ ہے کہ سینیٹ میں سبقت حاصل کرسکیں اور ساتھ ہی ایوانِ نمائندگان میں بھی ارکان کی تعداد بڑھا سکیں، جہاں اس وقت ری پبلیکن پارٹی کو برتری حاصل ہے۔

مختلف ذرائع کی جانب سے مرتب ہویے والی قومی جائزہ رپورٹیں سے پتا چلتا ہے کہ کلنٹن کو ٹرمپ پر چھ فی صد کی شرح سے برتری حاصل ہے، جو جائیداد کے نامور کاروباری شخص ہیں،جنھوں نے اس سے قبل کبھی کسی منتخب عہدے کا الیکشن نہیں لڑا۔ لیکن، اتوار کو 'اے بی سی نیوز' کی ایک نئی عام جائزہ رپورٹ سامنے آئی ہے جس سے پتا چلتا ہے کہ کلنٹن کی سبقت بڑھ کر 38 کے مقابلے میں 50 تک پہنچ گئی ہے، جس سے قبل ٹرمپ پر خواتین سے روا رکھے گئے سلوک کا تنازع سامنے آ چکا ہے جب کہ اُنھوں نے کہا ہے کہ اگر وہ کامیاب نہیں ہوتے تو وہ انتخابات کے نتائج نہیں مانیں گے۔

ٹرمپ کے صدارتی مہم کی سربراہ، کلیانے کونوے نے اتوار کے روز 'این بی سی نیوز' کو بتایا کہ ''ہم پیچھے رہ گئے ہیں''۔

تاہم، اُن کا کہنا تھا کہ ''ہم مایوس نہیں۔ ہمیں پتا ہے کہ ہم اب بھی جیت سکتے ہیں''۔

XS
SM
MD
LG