رسائی کے لنکس

logo-print

محکمہٴ خارجہ کےلیےمجوزہ بجٹ میں تقریباً پانچ ارب ڈالر اضافے کا دفاع


اِس کا زیادہ تر حصہ افغانستان، پاکستان اورعراق کےلیے رقوم مہیہ کرنے پر صرف ہوگا: ہلری کلنٹن

امریکی وزیرِ خارجہ ہلری کلنٹن نے محکمہٴ خارجہ کے لیے مجوزہ بجٹ میں تقریباً پانچ ارب ڈالر اضافہ کرنے کا دفاع کیا ہے، جِس کا زیادہ تر حصہ، اُن کے بقول، افغانستان، پاکستان اور عراق کے لیے رقوم مہیہ کرنے پر صرف ہوگا۔

اُنھوں نے یہ بات بدھ کے روز امریکی سینیٹ کی ایک کمیٹی کی سماعت کے دوران کہی۔

اُن کا کہنا تھا کہ اگلے محاذ کے ملکوں کو رقوم کی فراہمی سے یہ بات ممکن ہوگی کہ سینکڑوں مزید سولین افراد کو افغانستان میں تعینات کیا جاسکے گا، اور پاکستان میں دہشت گردی کے انسداد اور معیشت کی ترقی کو فروغ دینے میں مدد ملے گی۔

اُنھوں نے کہا کہ اُن کے ایجنڈے میں ایران کو اولین ترجیح حاصل ہے، اور ایران کی طرف سے اپنے جوہری پروگرام کے بارے میں زیادہ اطلاعات فراہم کرنے سے مسلسل انکار کے باعث بین الاقوامی برادری کے پاس نئی اور سخت پابندیاں عائد کرنے کے سوا کوئی اور گنجائش باقی نہیں رہی ۔ اُنھوں نے کہا کہ نئی پابندیاں لگانے کے حوالے سے امریکی عہدے دار وں نے چین کی حمایت حاصل کرنے میں پیش رفت حاصل کی ہے۔

اُنھوں نے یہ بھی کہا کہ ہیٹی کے زلزلے کو چھ ہفتے گزرگئے ہیں ، اور اِس دوران اُنھیں امریکی قیادت کی اہمیت کا مزید اندازہ ہوا ہے۔ اُنھوں نے 12جنوری کے زلزلے کے باعث ہیٹی میں آنے والی تباہ کاری سے نمٹنے کے لیے لیے جانے والے امریکی اقدامات کی تعریف کی۔

اُن کا کہنا تھا کہ جوں جوں ہیٹی بحالی کے کام کی طرف بڑھے گا، امریکہ ہیٹی کی حکومت اوردوسرے بین الاقوامی شراکت داروں کے ساتھ مل کراِس کام میں مددکرتا رہے گا۔

کلنٹن نے قانون سازوں کو یہ بھی بتایا کہ اُنھیں امید ہے کہ اسرائیل فلسطین امن مذاکرات بہت جلد دوبارہ شروع ہوں گے۔ اُنھوں نے کہا کہضروری ہے کہ اسرائیلی اور فلسطینی اُن معاملات پر بات چیت کا آغاز کریں جو اُن ٕمیں نفاق کا موجب ہیں۔

اُنھوں نے پاک بھارت بات چیت کے بارے میں کہا کہ امریکی عہدے داروں نے دونوں فریقین سے کہا ہے کہ مذاکرات کا سلسلہ جاری کریں۔

کلنٹن نے کہا کہ افغانستان، پاکستان اور عراق کی سکیورٹی پر سرمایہ کاری کرنے کے علاوہ ، امریکی محکمہ ٴ خارجہ دنیا بھر کے کمزور معاشروں کی ترقی کے لیے سرمایہ مختص کر رہا ہے۔

XS
SM
MD
LG