رسائی کے لنکس

logo-print

یمن: حوثی باغیوں کا فوجی پریڈ پر حملہ، 30 سے زائد اہلکار ہلاک


ہلاک ہونے والوں میں کمانڈر بریگیڈیئر جنرل منیر الیافی بھی شامل ہیں جنہیں فوجی کمان میں اہم حیثیت حاصل تھی۔

یمن میں ایک فوجی پریڈ پر حوثی باغیوں کے حملے کے نتیجے میں سرکاری فوج کے اہم کمانڈر سمیت 30 سے زائد اہلکار ہلاک اور متعدد زخمی ہوگئے ہیں۔

خبر رساں ادارے 'رائٹرز' کے مطابق، عدن کے ضلع برائقا میں واقعہ الجالا ملٹری کیمپ پر اُس وقت دھماکا ہوا جب وہاں پریڈ کی تیاریاں مکمل ہوچکی تھیں۔ حملے کے نتیجے میں 32 اہلکاروں کی ہلاکت کی اطلاعات ہیں۔

حکومت کے حامی سکیورٹی ذرائع کے مطابق، ہلاک ہونے والوں میں کمانڈر بریگیڈیئر جنرل منیر الیافی بھی شامل ہیں جنہیں فوجی کمان میں اہم حیثیت حاصل تھی۔

خبر رساں ادارے رائٹرز کے مطابق، کمانڈر منیر الیافی ملٹری پریڈ دیکھنے کے لیے اسٹیج پر موجود تھے اور وہ مہمانوں کے استقبال کے لیے اپنی نشست سے اٹھے ہی تھے کہ اسٹیج کے پیچھے زور دار دھماکہ ہوا۔

دھماکے کے بعد افراتفری مچ گئی اور فوری طور پر لاشوں اور زخمیوں کو اسپتال پہنچانے کا عمل شروع کیا گیا۔

'رائٹرز' کے مطابق، اہلکاروں کی بڑی تعداد ایک لاش کے گرد جمع ہو کر رو رہی تھی اور امکان ظاہر کیا جا رہا ہے کہ وہ لاش کمانڈر منیر الیافی کی ہوسکتی ہے۔

دوسری جانب، ایران کے حمایت یافتہ حوثی باغیوں کے آفیشل ٹی وی چینل 'المسیرا' کے مطابق، یمنی فوج کی ملٹری پریڈ پر مختصر فاصلے تک ہدف کو نشانہ بنانے والے بیلسٹک میزائل سے حملہ کیا گیا ہے۔

ملٹری پریڈ پر حوثیوں کے حملے کے بعد یمن کی حکومت اور اتحادیوں کی جانب سے فی الحال کسی ردعمل کا اظہار نہیں کیا گیا۔

یاد رہے کہ سعودی عرب کی قیادت میں مغربی ممالک کے اتحاد نے 2015 میں یمن میں بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ حکومت کی بحالی کے لیے مداخلت کی تھی۔

اس سے قبل 2014 میں خانہ جنگی کے دوران حوثی باغیوں نے حکومت کو گرا کر دارالحکومت صنعا پر قبضہ کرتے ہوئے نئی حکومت کے قیام کا اعلان کیا تھا۔

حوثی باغیوں کی جانب سے سعودی عرب کے سرحدی شہروں میں میزائلوں اور ڈرون حملوں کی کوششیں کی جاتی رہی ہیں جسے سعودی عرب کی فضائی ڈیفنس فورس متعدد بار ناکام بنا چکی ہے۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG