رسائی کے لنکس

logo-print

سدھو امن کے سفیر ہیں، عمران خان


نوجوت سنگھ سدھو۔ فائل فوٹو

پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان نے اپنی تقریب حلف برداری میں شرکت کیلئے پاکستان آمد پر بھارت کے سابق کرکٹر اور اپنے دیرینہ دوست نوجوت سنگھ سدھو کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا ہے کہ سدھو امن کے سفیر ہیں۔

آج منگل کے روز ایک ٹویٹ میں عمران خان نے کہا، ’’میں اپنی تقریب حلف برداری میں شرکت کیلئے پاکستان آنے پر سدھو کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔ وہ امن کے سفیر تھے اور اُنہیں پاکستانی عوام نے بہت محبت اور پیار دیا۔ بھارت میں جن لوگوں نے بھی اُن کو ہدف تنقید بنایا، اُنہوں نے جنوبی ایشیا میں امن کیلئے کوئی خدمت انجام نہیں دی ہے۔ امن کے بغیر ہمارے لوگ ترقی نہیں کر سکتے۔‘‘

پاکستانی وزیر اعظم نے مزید کہا کہ پاکستان اور بھارت کو ہر صورت مزاکرات کر کے کشمیر سمیت تمام مسائل حل کرنا ہوں گے اور آگے بڑھنا ہو گا۔ اُنہوں نے کہا کہ جنوبی ایشیائی خطے میں غربت کے خاتمے اور عوام کی بہتری کیلئے بہترین طریقہ یہی ہے کہ ہم اپنے اختلافات بات چیت کے ذریعے ختم کریں اور باہمی تجارت کو فروغ دیں۔

نوجوت سنگھ سدھو کانگریس کے رہنما اور ریاست پنجاب کے وزیر ہیں۔ عمران خان کے اس بیان سے قبل تقریب حلف برداری میں شرکت کے دوران پاکستانی فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ سے گلے ملنے پر بھارت میں سدھو کو شدید طور پر ہدف تنقید بنایا گیا۔ سدھو نے تنقید کے جواب میں کہا کہ پاکستانی آرمی چیف سے گلے ملنا ایک جذباتی لمحہ تھا اور اس کا مقصد کوئی سیاسی پیغام دینا ہر گز نہیں تھا۔

سدھو کے مطابق پاکستانی فوج کے سربراہ نے اُن سے کہا تھا کہ وہ سکھ مذہب کے بانی گرو نانک کے جنم دن کے موقع پر کرتار پور صاحب کے ساتھ سفری راستہ کھولنے کی کوشش کر رہے ہیں تاکہ بھارتی سکھ آسانی سے بابا گرو نانک کے جنم دن کی تقریبات میں شرکت کر سکیں۔ یوں اُن کیلئے یہ ایک جذباتی لمحہ تھا۔

سدھو کی اس وضاحت کے بعد بھارت کی حکمران جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی کی طرف سے جاری ہونے والے ایک بیان کہا گیا کہ کانگریس پارٹی میں ایسے لوگ موجود ہیں جو بھارت میں پاکستان کے مفادات کو فروغ دینے کی کوشش کر رہے ہیں۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG