رسائی کے لنکس

logo-print

آسٹریلیائی پولیس افسران کے نسل پرستانہ تبصروں پر بھارت کی ناراضگی


آسٹریلیائی پولیس افسران کے نسل پرستانہ تبصروں پر بھارت کی ناراضگی

بھارت میں آسٹریلیا کے اعلیٰ پولیس افسران کی جانب سے بھارتی طلبا کے سلسلے میں ایک نسل پرستانہ اِی میل بھیجے جانے پر شدید ناراضگی کا اظہار کیا ہے اور بھارت میں تعینات آسٹریلیا کے ہائی کمشنر پیٹر ورگیز کو طلب کرکے وضاحت مانگی ہے۔

سڈنی کے ایک اخبار میں شائع ایک خبر کے مطابق افسران نےایک وِڈیو جاری کیا ہے جِس میں ایک ٹرین مسافر کو جو کہ چھت پر بیٹھا ہوا تھا بجلی کے تار چھونے سے کرنٹ لگنے اور پھر اُس کی موت ہو جانے کو دکھایا گیا ہے ، اور یہ مشورہ دیا گیا ہے کہ میلبورن میں بھارتی طلبہ کے مسائل کو اِسی طرح حل کیا جاسکتا ہے۔ بھارت نے اِسے ‘صدمہ پہنچانے والا اور ناقابلِ برداشت قرار دیا ہے’۔

بعد میں وزیرِ خارجہ ایس ایم کرشنا نے ایک بیان جاری کرکے کہا کہ ‘اِس طرح کا تعصب برداشت نہیں کیا جائے گا اور یہ تشویش کا معاملہ ہے’۔ آسٹریلیا کے ہائی کمشنر نے بھی اِسے ‘ناقابلِ برداشت ’ قرار دیا ہے۔

اُن کا کہنا تھا کہ‘ یہ اِی میل مجرمانہ اور ناقابلِ قبول ہے اور آسٹریلیائی معاشرے کے تحمل اور احترام کے اصولوں کے منافی ہے’۔

اُنھوں نے مزید کہا کہ ایک پولیس افسر نے ملازمت ترک کردی ہے اور دوسرے کے خلاف تادیبی کارروائی کی جارہی ہے۔

آسٹریلیائی اور وکٹوریائی حکومتوں اور وکٹوریہ کے پولیس کمشنر نے بھی سخت الفاظ میں اِس واقعے کی مذمت کی ہے۔خیال رہے کہ اِن دونوں پولیس افسران کا تعلق بھی وکٹوریہ صوبے سے ہے۔

XS
SM
MD
LG