رسائی کے لنکس

logo-print

ایران نے آئی اے ای اے کو اپنے یورینیم کی افزودگی کے منصوبوں سے آگاہ کر دیا


ایران نے آئی اے ای اے کو اپنے یورینیم کی افزودگی کے منصوبوں سے آگاہ کر دیا

ایران نے اپنی یورینیم کی افزودگی روکنے کے سلسلے میں عالمی طاقتوں کے دباؤ کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس نے اقوام متحدہ کے جوہری ادارے کو یورینیم کی اعلٰی تر درجے کی افزودگی کے بارے میں اپنے منصوبوں سے آگاہ کر دیا ہے۔

جوہری توانائی کے بین الاقوامی ادارے کے لیے ایران کے نمائندے علی اصغر سلطانیہ نے کہاہے کہ ایران نے ادارے کو یہ سرکاری نوٹس پیر کو دیا۔

ایران کے جوہری توانائی کے ادارے کے سر براہ علی اکبر صالح اس سے قبل یہ اعلان کر چکے ہیں کہ ایران منگل کے روز افزودگی کا عمل شروع کر دے گا۔

ایران نے کہا ہے کہ اسے اپنے ایک طبی تحقیقی ری ایکٹر کے ایندھن کے لیے 20 فیصد تک کی افزودہ یورینیم کی ضرورت ہے۔

ائی اے ای اے نے عالمی طاقتوں کے ساتھ ایک معاہدے میں ثالثی کی تھی جس کے تحت وہ یران کو اس ری ایکٹر کے لیے ایندھن فراہم کریں گےاور بدلے میں ایران اپنی کم تر درجے کی افزودہ یورینیم بیرون ملکوں میں بھیجے گا۔

اس معاہدے کا مقصد ایران کے بارے میں ان خدشات کو کم کرنا تھا کہ وہ یورینیم کو اس حد تک افزودہ کرنے کی اہلیت رکھتا ہے جس حد پر اسے ایک جوہری ہتھیار بنانے کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے ۔ لیکن ایران اس معاہدے کو قبول کرنے میں اپنی رضامندی کے بارے میں ملے جلے اشارے ظاہر کر چکا ہے۔

XS
SM
MD
LG