رسائی کے لنکس

logo-print

طالبان سے امن مذاکرات بے معنی


افغان صدر حامد کرزئی

افغان صدر حامد کرزئی نے کہا ہے کہ عسکریت پسندوں سے امن بات چیت کرنے کی کوشش بے سود ہے اور مذاکرات میں طالبان نہیں بلکہ ہمسایہ ملک پاکستان کو دوسرا فریق بنانے کی ضرورت ہے۔

افغان رہنما کا یہ ویڈیو بیان ہفتہ کو کابل میں ذرائع ابلاغ کو جاری کیا گیا ہے۔

صدر کرزئی گزشتہ کئی سالوں سے طالبان کے ساتھ مصالحت کا عمل شروع کرنے پر ضرور دیتے آئے ہیں۔ لیکن اپنے تازہ بیان میں اُنھوں نے کہا ہے کہ اب یہ کوشش مزید سود مند نہیں ہے کیونکہ اپنے آپ کو امن کا پیغام رساں بنا کر آنے والے اُس خودکش بمبار کو طالبان نے ہی بھیجا تھا جس نے بیس ستمبر کو سابق صدر پروفیسر برہان الدین ربانی کو ہلاک کیا تھا۔

مقتول افغان رہنما اس عالیٰ امن کونسل کے سربراہ تھے جو صدر کرزئی کی ہدایت پر طالبان کے ساتھ امن ومصحالت کو فروغ دینے کے لیے گزشتہ سال قائم کی گئی تھی۔ صدر کرزئی کے بقول افغانستان کے لیے امن ومصحالت کی کوششوں کو آگے بڑھانے کے واحد راستہ پاکستان سے مذاکرات ہیں۔

XS
SM
MD
LG