رسائی کے لنکس

logo-print

مسائل کے حل کے لیے پریشر گروپ کے طور پر رہیں گے: منظور پشتین


منظور پشتین، فائل فوٹو

پی ٹی ایم کے سربراہ منظور پشتین ابتدا سے ہی اس بات کو دہراتے رہے ہیں کہ ان کی تحریک مزاحمتي ہے جس کا پارلیمانی سیاست یا الیکشنز سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

پشتون تحفظ موومنٹ (پی ٹی ایم) نے اپنے متعدد راہنماؤں کو تحریک کی کور کمیٹی کی رکنیت سے الگ کر دیا ہے۔

یہ وہ ارکان ہیں جو اسلام آباد، خیبر پختون خوا، فاٹا اور بلوچستان کے مختلف علاقوں سے الیکشن میں حصہ لے رہے ہیں۔

پی ٹی ایم رہنما منظور پشتین نے وائس آف امریکہ کی شہناز عزیز سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ یہ فیصلہ پی ٹی ایم کی کور کمیٹی کے ارکان کی جانب سے 25 جولائی کو ہونے والے انتخابات میں حصہ لینے کے فیصلے کی وجہ سے کیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پی ٹی ایم کے کور کمیٹی کے جس اجلاس میں یہ فیصلہ کیا گیا، اس میں الیکشن میں حصہ لینے والے افراد بھی موجود تھے۔

پی ٹی ایم کے سربراہ منظور پشتین ابتدا سے ہی اس بات کو دہراتے رہے ہیں کہ ان کی تحریک مزاحمتي ہے جس کا پارلیمانی سیاست یا الیکشنز سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

انہوں نے یہ بات زور دے کر کہی کہ اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ ان ارکان نے تحریک کے پلیٹ فارم یا نام کو کسی طرح سے استعمال کیا ہے، یا اسے نقصان پہنچایا ہے ۔ اور یہ کہ وہ الیکشن کے بعد پھر تحریک کا حصہ بن سکتے ہیں۔

پشتون تحفظ موومنٹ کے سربراہ منظور پشتین کا یہ انٹرویو سننے کے لئے نیچے دیئے ہوئے لنک پر کلک کریں۔

please wait

No media source currently available

0:00 0:05:07 0:00

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG