رسائی کے لنکس

logo-print

سابق صدر کو عدالت میں پیش کرنے کے لیے ایک ہفتے کی مہلت


پرویز مشرف ان دنوں لندن میں خودساختہ جلاوطنی کی زندگی گزار رہے ہیں

راولپنڈی میں ہفتہ کو انسداد دہشت گردی کی ایک عدالت نے سابق وزیراعظم بے نظیر بھٹو کے قتل کے مقدمے کی سماعت کے دوران استغاثہ کے وکلاء کو سابق صدر پرویز مشرف کو عدالت کے روبرو پیش کرنے کے لیے ایک ہفتے کی مہلت دی ہے۔

عدالت نے گذشتہ ماہ سابق فوجی صدر کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کرتے ہوئے اُنھیں عدالت میں پیش ہونے کا حکم دیا تھا ۔ پرویز مشرف ان دنوں لندن میں خودساختہ جلاوطنی کی زندگی گزار رہے ہیں اور متعدد بار بے نظیر بھٹو کے قتل میں ملوث ہونے کی تردید کرتے آئے ہیں۔

استغاثہ نے ہفتہ کو عدالت کو بتایا کہ پرویز مشرف کے وارنٹ گرفتاری برطانوی حکام کے حوالے کردیے گئے ہیں اور انھیں امید ہے کہ اس ضمن میں جلد ہی کوئی جواب موصول ہوجائے گا۔ مقدمے کی آئندہ سماعت 26مارچ کو ہوگی۔

سابق وزیراعظم بے نظیر بھٹو 27دسمبر 2007ء کو راولپنڈی کے لیاقت باغ میں جلسہ عام سے خطاب کے بعد ایک خودکش بم حملے میں ہلاک ہوگئی تھیں۔ راولپنڈی پولیس کے دو اعلیٰ افسران سعود عزیز اور خرم شہزاد محترمہ بھٹو کی سکیورٹی میں غفلت برتنے کے الزام میں زیر حراست ہیں۔

27 دسمبر 2007ء کو جب بے نظیر بھٹو راولپنڈی کے تاریخی لیاقت باغ میں جلسہ عام سے خطاب کے لیے گئی تھیں تو اُس وقت سعود عزیز راولپنڈی پولیس کے سربراہ تھے جب کہ ایس پی خرم شہزادبھی بے نظیر بھٹوکی حفاظت پر معمور تھے۔

XS
SM
MD
LG