رسائی کے لنکس

logo-print

افغانستان سےواپسی پرنیٹو کےوزرا کا اتفاق


تالِن میں اجلاس کے دوران امریکی وزیرِ خارجہ ہلری کلنٹن سمیت تمام وزرائے خارجہ نے اختیارات کی منتقلی کی شرائط کی تائید کی

نیٹو کے وزرائے خارجہ نے استونیا کے دارالحکومت میں اپنے اجلاس کے دوران افغانستان کا کنٹرول اِسی سال افغان حکومت کو منتقل کرنے کا کام شروع کرنے سے اتفاق کیا ہے۔

تالِن میں اجلاس کے دوران امریکی وزیرِ خارجہ ہلری کلنٹن سمیت تمام وزرائے خارجہ نے اختیارات کی منتقلی کی شرائط کی تائید کی۔

نیٹو کے سیکریٹری جنرل اینڈرس فو راسمُوسَین نے کہا ہے کہ 2010 کے دوران نیٹو کے سامنے اصل کام اپنے اقتدارِ اعلیٰ کو بروئے کار لانے میں افغان حکومت کی مدد کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ افغانستان کے شہری اور اُن ملکوں کے شہری ، جنہوں نے افغانستان کے لیے فوجیں فراہم کی ہیں، اس سمت میں نمایاں پیش رفت کا مطالبہ کررہے ہیں۔

ہلری کلنٹن نے خبر دار کیا ہے کہ افغانستان میں آنے والے برسوں میں طالبان بدستور ایک خطرہ بنے رہیں گے۔انہوں نے کہا کہ اتحاد کوئى ایسی مقامی سکیورٹی فورس تشکیل دینے کے لیے کام کررہا ہے ، جو لوگوں کو تحفط فراہم کرسکے اور اُن میں سلامتی کا کوئى احساس پیدا کرسکے۔

افغانستان میں 40 سے زیادہ ملکوں سے آئے ہوئےنیٹو کے تقریباً 80 ہزار فوجی تعینات ہیں۔

XS
SM
MD
LG