رسائی کے لنکس

logo-print

بیرونِ ملک پاکستانیوں کو ضمنی انتخابات میں ووٹ ڈالنے کی اجازت


فائل فوٹو

چیف جسٹس نے حکم جاری کیا کہ بیرونِ ملک مقیم پاکستانیوں کے ووٹ ڈالنے سے متعلق 'نادرا' کے پائلٹ پراجیکٹ کو الیکشن کمیشن کے قواعد اور آپریشن پلان کے تحت مکمل کیا جائے۔

سپریم کورٹ آف پاکستان نے بیرونِ ملک مقیم پاکستانیوں کو ملک میں ہونے والے انتخابات ووٹ دینے کا حق دے دیا ہے اور تارکِ وطن پاکستانی آئندہ ضمنی انتخابات میں ووٹ کا حق استعمال کرسکیں گے۔

چیف جسٹس کی سربراہی میں عدالتِ عظمیٰ کے تین رکنی فل بینچ نے جمعے کو لاہور رجسٹری میں سمندر پار پاکستانیوں کو ووٹ کا حق دینے سے متعلق کیس کی سماعت کی۔

دورانِ سماعت سیکریٹری الیکشن کمیشن نے عدالت کو بتایا کہ انہوں نے شہریوں کی رجسٹریشن کے ذمے دار ادارے 'نادرا' کی مدد سے تارکِ وطن پاکستانیوں کے ووٹ ووٹر لسٹوں میں درج کرلیے ہیں اور تمام رولز 'نادرا' کی مدد سے بنائے ہیں۔

کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے عدالت نے حکم دیا ہے کہ بیرونِ ملک مقیم پاکستانی انتخابات میں ووٹ کا حق استعمال کریں گے اور پہلے مرحلے میں عام انتخابات کے نتیجے میں خالی ہونے والی نشستوں پر ضمنی انتخابات میں انہیں ووٹ ڈالنے کی اجازت دی جا رہی ہے۔

چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ 'آئی ووٹنگ' کے ذریعے ڈالے جانے والے ووٹوں کو ضمنی انتخابات میں شمار کیا جائے گا اور کسی بھی تنازع کی صورت میں 'آئی ووٹنگ' کے نتائج کو الگ کردیا جائے۔

چیف جسٹس نے بیرونِ ممالک پاکستانیوں کو مبارک باد دیتے ہوئے کہا کہ ان کے ووٹ ڈالنے کا حق تسلیم کرلیا گیا ہے۔ اب عمل درآمد کا معاملہ ہے۔ انتخابات کرانا الیکشن کمیشن کی ذمہ داری ہے۔

چیف جسٹس نے حکم جاری کیا کہ بیرونِ ملک مقیم پاکستانیوں کے ووٹ ڈالنے سے متعلق 'نادرا' کے پائلٹ پراجیکٹ کو الیکشن کمیشن کے قواعد اور آپریشن پلان کے تحت مکمل کیا جائے۔

اس موقع پر انہوں نے نادرا اور الیکشن کمیشن کی کوششوں کو سراہا کہ ان کی مدد سے پاکستان سے باہر رہنے والوں کو ووٹ ڈالنے کا حق ملا ہے۔

چیف جسٹس نے کہا کہ تجرباتی نفاذ کا مقصد یہ نہیں کہ اس سسٹم کے نتائج کو نظر انداز کردیا جائے۔ انتخابی نتائج کی درستگی سے متعلق تمام نتائج پارلیمنٹ کے سامنے رکھے جائیں۔

خیال رہے کہ بیرونِ ملک مقیم پاکستانیوں کو ووٹ کا حق دینے کی درخواست پاکستان تحریکِ انصاف کے سربراہ عمران خان نے کی تھی۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG