رسائی کے لنکس

logo-print

افغانستان پر پاکستان مخالف دہشت گردوں کے خلاف کارروائی پر زور


مشترکہ ورکنگ گروپ کا اجلاس

پاکستان نے افغانستان پر زور دیا ہے کہ وہ پاکستان مخالف دہشت گردوں کے خلاف کارروائی کرے۔

یہ بات مشترکہ ورکنگ گروپ کے کابل میں ہونے والے پہلے اجلاس کے موقع پر پاکستانی وفد کی قیادت کرنے والی سیکرٹری خارجہ تہمینہ جنجوعہ نے اجلاس کے دوران کہی۔

ترجمان دفتر خارجہ محمد فیصل نے ٹوئٹر پر بتایا کہ سیکرٹری خارجہ کا کہنا تھا کہ دونوں ملکوں کو ایک دوسرے پر الزام تراشی کی بجائے مربوط تعاون کرنا چاہیے۔

اسلام آباد نے کابل کے ساتھ پانچ مشترکہ ورکنگ گروپ تجویز کیے تھے جن کا مقصد انسداد دہشت گردی، خفیہ معلومات کے تبادلے، فوجی، معاشی، اقتصادی، تجارتی، راہداری روابط، پناہ گزینوں کی واپسی اور باہمی روابط پر توجہ دینا ہے۔

ترجمان محمد فیصل کا کہنا تھا کہ پاکستان اس موقف پر قائم رہا ہے کہ افغانستان میں امن و استحکام کا حصول فوجی طریقے سے ممکن نہیں اور اسے یقینی بنانے کے لیے افغاںوں کی شمولیت اور زیر قیادت امن عمل ہی واحد راستہ ہے۔

یہ اجلاس ایک ایسے وقت ہوا ہے جب افغانستان کی طرف سے اپنے ہاں ہونے والے حالیہ دہشت گرد واقعات میں پاکستان کی طرف انگشت نمائی کی جا رہی ہے اور جمعہ کو ہی افغان صدر اشرف غنی نے قوم سے اپنے خطاب میں دعویٰ کیا تھا کہ "پاکستان طالبان کا مرکز ہے" اور عسکریت پسندوں سمیت دیگر دہشت گرد گروپوں کے خاتمے کے لیے عملی اور واضح اقدام کرنا ہوں گے۔

انھوں نے الزام عائد کیا تھا کہ طالبان عسکریت پسند پاکستان کو اپنے ایک ہیڈ کوارٹر کے طور پر استعمال کر رہے ہیں۔

پاکستان ایسے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہتا آیا ہے کہ وہ افغانستان میں قیام امن اور اپنی سرزمین کسی دوسرے ملک کے خلاف استعمال نہ ہونے دینے کے عزم پر قائم ہے۔

افغان صدر کا کہنا تھا کہ شورش پسندوں اور ان کے نیٹ ورک سے متعلق معلومات کا پاکستان سے تبادلہ کیا جا چکا ہے اور ان کے بقول پاکستان "کھوکھلے وعدے کرنے کی بجائے ان کے خلاف ٹھوس اور واضح کارروائیاں کرے۔"

سلامتی کے امور کے سینیئر تجزیہ کار طلعت مسعود کہتے ہیں کہ تناؤ کے باوجود دونوں ملکوں کو رابطے اور بات چیت کا عمل جاری رکھنے کی ضرورت ہے۔

وائس آف امریکہ سے گفتگو میں ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کی یہ کوشش ہو گی کہ افغانستان اگر "خفا" بھی ہے تو اس کے اندرونی حالات کو مدنظر رکھتے ہوئے اسے اپنے تعاون کا یقین دلائے اور اسے یہ باور کروائے کہ حقیقت کیا ہے "اور امن کے لیے دونوں کا تعاون بہت ضروری ہے۔"

رواں ہفتے ہی افغان انٹیلی جنس ادارے کے سربراہ اور وزیر داخلہ نے پاکستان کا دورہ کیا تھا۔

پاکستان نے طالبان یا حقانی نیٹ ورک کی طرف سے افغانستان کے خلاف پاکستان کی سرزمین استعمال کرنے کے الزامات کو بھی رد کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ اپنے ہاں تمام دہشت گردوں کے خلاف بلا امتیاز کارروائیاں کرتا چلا آ رہا ہے۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG