رسائی کے لنکس

logo-print

کسی چینی فوجی اڈے کی تعمیر کا منصوبہ زیرِ غور نہیں: پاکستان


ترجمان دفترِ خارجہ محمد فیصل (فائل فوٹو)

ترجمان نے کہا کہ امریکہ کی جانب سے پاکستان کو دی جانے والی امداد کا تفصیلی ریکارڈ جاری کیا جائے گا۔

پاکستان کی وزارتِ خارجہ نے کہا ہے کہ پاک فوج کے شعبۂ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) سے واضح بیان آچکا ہے کہ اگر امریکہ نے پاکستان میں ڈرون حملہ کیا تو اس کا مؤثر جواب دیا جائے گا۔

دفترِ خارجہ اسلام آباد میں ہفتہ وار نیوز بریفنگ کے دوران ترجمان ڈاکٹر فیصل نے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف پاکستان کی قربانیاں ڈھکی چھپی نہیں اور پاکستان نے امریکی صدر کے ٹوئٹ پر امریکی سفیر کو طلب کرکے احتجاج ریکارڈ کرایا ہے۔

امریکہ کی طرف سے 25 کروڑ ڈالر کی امداد روکے جانے سے متعلق ایک سوال پر ڈاکٹر محمد فیصل کا کہنا تھا کہ پاکستان کی خارجہ پالیسی کا تعین اقتصادی پالیسی کے تحت نہیں کیا جاتا۔ انہوں نے کہا کہ زندہ قومیں چیلنجز کا مقابلہ خندہ پیشانی سے کرتی ہیں۔

ترجمان نے کہا کہ امریکہ کی جانب سے پاکستان کو دی جانے والی امداد کا تفصیلی ریکارڈ جاری کیا جائے گا۔

ڈاکٹر محمد فیصل کا کہنا تھا کہ پاکستان میں چین کے فوجی اڈے بنانے کا کوئی منصوبہ زیرِ غور نہیں اور نہ ہی گوادر یا اس کے نواحی علاقوں میں فوجی اڈے بنانے سے متعلق چین کی کوئی درخواست پاکستان کو ملی ہے۔

انہوں نے کہا کہ چند عناصر کی جانب سے پاک چین اقتصادی راہداری سے متعلق منصوبوں کے بارے میں افواہیں پھیلائی جارہی ہیں۔

ایران میں جاری مظاہروں پر ترجمان دفترِ خارجہ نے کہا کہ ایران پاکستان کا برادر اسلامی ملک ہے اور مظاہرے ایران کا اندرونی معاملہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان کو امید ہے کہ تہران حکومت پرامن طریقے سے مظاہروں پر قابو پالے گی۔

ایک سوال پر ترجمان کا کہنا تھا کہ بھارت نے خواجہ معین الدین چشتی کے عرس میں شرکت کے لیے پاکستانیوں کو ویزے جاری نہیں کیے۔

انہوں نے بتایا کہ بھارت نے ورلڈ کپ کے لیے اپنی قومی بلائنڈ کرکٹ ٹیم کو بھی پاکستان نہیں آنے دیا جو کہ افسوس ناک ہے۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG