رسائی کے لنکس

مفتی منیب الرحمٰن کا اسلام آباد میں جاری دھرنے کے مسئلے کے پرامن حل پر زور


مفتی منیب الرحمٰن۔ فائل فوٹو

مفتی منیب الرحمان نے دھرنے کی تائید اور حمایت کرتے ہوئے حکومت کو متنبہ کیا کہ ایسا کوئی اقدام نہ اٹھایا جائے جس سے وفاقی دارلحکومت میں لال مسجد جیسا واقعہ دوبارہ رونما ہو۔

عالم دین اور تنظیم المدراس اہل سنت کے صدر مفتی منیب الرحمان نے کہا ہے کہ اسلام آباد میں جاری دھرنے کے شرکاء کے جائز مطالبات کو تسلیم کیا جائے۔ کراچی میں پریس کانفرنس سے خطاب میں مفتی منیب الرحمان نے دھرنے کی تائید اور حمایت کرتے ہوئے حکومت کو متنبہ کیا کہ ایسا کوئی اقدام نہ اٹھایا جائے جس سے وفاقی دارلحکومت میں لال مسجد جیسا واقعہ دوبارہ رونما ہو۔ ریلی اور دھرنوں میں پہلے بھی اموات ہوئی ہیں۔ حکومت ایسا کوئی اقدام نہ اُٹھائے جس سے چیزیں الجھ جائیں۔

مفتی منیب الرحمان نے کہا کہ تحریک لبّیک کے ساتھ فوری بامعنی مذاکرات کا عمل شروع کیا جائے جس کا مقصد معاملے کا پرامن حل ہو۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ ختم نبوت کے قانون میں تبدیلی لانے والوں کو بھی بےنقاب کیا جائے۔ دھرنے کا طول پکڑنا کسی کے مفاد میں نہیں۔ دونوں فریق مسئلے کو فوری طور پر حل کرنے میں اپنا کردار ادا کریں اور درمیانی راستہ اختیار کریں۔ انہوں نے کہا کہ جذباتیت کے بجائےٹھنڈے دل سے معاملےکو حل کیا جائے۔

مفتی منیب الرحمان نے میڈیا اور حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ حساس معاملے پر جب بھی جذبات کا اظہار کیا جاتا ہے تو آئین اور قانون کی حکمرانی کی باتیں کی جاتی ہیں۔ لیکن ان معاملات کو اچھال کر جذبات سے کیوں کھیلا جاتا ہے اور اس پر آواز اٹھانا کیوں کر غلط ہے؟

انہوں نے دعویٰ کیا کہ مظاہرین اب تک پرامن ہیں اور انہیں یقین ہے کہ وہ آئندہ بھی پرامن رہیں گے۔ لیکن ان کے ختم نبوت قانون سے متعلق مطالبات حکومت کو تسلیم کرنے چائیے۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG