رسائی کے لنکس

logo-print

دورۂ انگلینڈ کے لیے پاکستان کے 29 رکنی اسکواڈ کا اعلان


فائل فوٹو

پاکستان کرکٹ بورڈ نے دورۂ انگلینڈ کے لیے 29 رکنی اسکواڈ کا اعلان کر دیا ہے۔ انڈر 19 کرکٹ ٹیم کے بلے باز حیدر علی کو بھی اسکواڈ میں شامل کیا گیا ہے۔

پاکستان اور انگلینڈ کے درمیان تین ٹیسٹ اور تین ٹی ٹوئنٹی میچوں پر مشتمل سیریز اگست اور ستمبر میں انگلینڈ میں کھیلی جائے گی۔

چیف سلیکٹر اور ہیڈ کوچ مصباح الحق نے کہا ہے کہ ایک ایسے اسکواڈ کا انتخاب کیا ہے جس سے انگلینڈ میں طویل اور محدود دونوں طرز کی کرکٹ میں بہتر کارکردگی کی توقع ہے۔

کرونا وائرس کی وجہ سے ٹیمیں دورے کے لیے ریزرور کھلاڑیوں کو بھی اسکواڈ میں شامل کر رہی ہیں۔

انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی) کی گائیڈ لائنز کے مطابق دورانِ میچ کسی کھلاڑی کے کرونا کا شکار ہونے کی صورت میں ریزرو کھلاڑیوں میں سے متبادل ٹیم میں شامل کیا جا سکتا ہے۔

فاسٹ بالر حسن علی، محمد عامر اور مڈل آرڈر بیٹسمین حارث سہیل دورۂ انگلینڈ کے لیے اسکواڈ میں شامل نہیں ہیں۔

اطلاعات کے مطابق حسن علی کمر کی انجری اور محمد عامر دوسرے بیٹے کی ولادت کی مصروفیت کے باعث دستیاب نہیں ہیں جب کہ حارث سہیل نے کرونا وائرس کی وبا کے پیشِ نظر دورۂ انگلینڈ سے معذرت کر لی تھی۔

پاکستان کے 29 رکنی اسکواڈ میں اوپننگ بلے باز عابد علی، فخر زمان، شان مسعود اور امام الحق جب کہ مڈل آرڈر میں اظہر علی، بابر اعظم، اسد شفیق، فواد عالم، حیدر علی، افتخار احمد، محمد حفیظ، شعیب ملک شامل ہیں۔

اسکواڈ میں دو وکٹ کیپرز محمد رضوان اور سرفراز احمد شامل ہیں۔ اسی طرح آل راؤنڈرز میں فہیم اشرف، حارث رؤف، عمران خان، عماد وسیم ٹیم کا حصہ ہیں۔

فاسٹ بالنگ کے شعبے میں محمد عباس، محمد حسنین، نسیم شاہ، شاہین شاہ آفریدی، سہیل خان، عثمان شنواری، وہاب ریاض جب کہ اسپن بالرز میں یاسر شاہ، عماد وسیم، کاشف بھٹی اور شاداب خان اسکواڈ میں شامل ہیں۔

حیدر علی کی اسکواڈ میں شمولیت

پاکستان کرکٹ بورڈ کی جانب سے جاری معلومات کے مطابق حیدر علی نے سیزن 20-2019 میں شاندار کارکردگی کی بدولت سیزن 21-2020 کے سینٹرل کانٹریکٹ کی ایمرجنگ کیٹیگری میں جگہ حاصل کی تھی۔

انہوں نے جون میں جنوبی افریقہ کی انڈر 19 کرکٹ ٹیم کے خلاف سیریز میں 317 رنز بنا کر پاکستان کی جانب سے سب سے زیادہ رنز بنانے والے دوسرے بہترین بیٹسمین ہونے کا اعزاز بھی حاصل کیا تھا۔

حیدر علی بنگلہ دیش میں کھیلے گئے ایمرجنگ ٹیمز ایشیا کپ کے پانچویں بہترین بیٹسمین تھے۔ انہوں نے ایونٹ میں 218 رنز بنائے تھے۔ وہ آئی سی سی انڈر 19 کرکٹ ورلڈ کپ 2020 میں پاکستان کے تیسرے بہترین بیٹسمین بھی رہے ہیں۔

اسپنر کاشف بھٹی بھی اپنے ڈیبیو کے منتظر ہیں۔ وہ آسٹریلیا اور سری لنکا کے خلاف اعلان کردہ اسکواڈ کا حصہ تھے مگر فائنل الیون میں جگہ نہیں بنا سکے تھے۔

اُدھر فاسٹ بالر سہیل خان کی قومی اسکواڈ میں واپسی ہوئی ہے۔ انہوں نے اپنا نواں اور آخری ٹیسٹ میچ 2016 میں میلبرن کرکٹ گراؤنڈ آسٹریلیا میں کھیلا تھا۔

سلیکٹرز نے بلال آصف، محمد نواز، موسیٰ خان اور عمران بٹ کو ٹور کے لیے ریزرو کھلاڑیوں میں شامل کیا ہے۔

ان چاروں ریزرو کھلاڑیوں کو انگلینڈ روانگی سے قبل کسی بھی کھلاڑی کے کووڈ 19 ٹیسٹ کی رپورٹ مثبت آنے کی صورت میں بیک اپ کے طور پر رکھا گیا ہے۔

دورۂ انگلینڈ کے لیے منتخب کھلاڑیوں کے کرونا ٹیسٹ 20 اور 25 جون کو ہوں گے۔

چیف سلیکٹر اور ہیڈ کوچ مصباح الحق کا کہنا ہے کہ کافی عرصے سے کھلاڑیوں کی میدان سے دوری ایک چیلنج ہے تاہم پرامید ہیں کہ انگلینڈ میں ایک ماہ کے دوران بھرپور ٹریننگ کے باعث مثبت نتائج سامنے آئیں گے۔

مصباح الحق نے واضح کیا ہے کہ اسکواڈ کے انتخاب کے دوران سلیکٹرز کی ترجیح طویل طرز کی کرکٹ رہی کیونکہ پاکستان کو آئندہ دو ماہ ٹیسٹ کرکٹ کھیلنی ہے۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG