رسائی کے لنکس

logo-print

ویڈیو لنک کے ذریعے بیان ریکارڈ نہیں کراؤں گا، مشرف


جنرل (ریٹائرڈ) پرویز مشرف۔ فائل فوٹو

سابق صدر جنرل ریٹائرڈ پرویز مشرف نے سنگین غداری کیس میں ویڈیو لنک پر بیان ریکارڈ کرانے سے انکار کر دیا ہے۔

سابق صدر کے انکار پر خصوصی بینچ نے ان کا بیان ریکارڈ کرنے کے لیے جوڈیشل کمیشن کے قیام کا حکم دے دیا۔

جسٹس یاور علی، جسٹس طاہرہ صفدر اور جسٹس نذر اکبر پر مشتمل خصوصی بینچ نے سنگین غداری کیس کی سماعت کی۔

سماعت کے دوران پرویز مشرف کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ پرویز مشرف ویڈیو لنک پر بیان ریکارڈ نہیں کرانا چاہتے۔ میرے موکل کو دل کا عارضہ ہے۔ پرویز مشرف بزدل نہیں اور نہ انہیں کسی کا خوف ہے بلکہ وہ خود پیش ہو کر اپنے دفاع میں شواہد پیش کرنا چاہتے ہیں۔

جسٹس یاور علی نے وکیل استغاثہ سے مخاطب ہوکر کہا کہ اگر بیان اسکائپ پر لینا ممکن نہیں ہے تو استغاثہ کا کیا موقف ہے۔

وکیل استغاثہ کا کہنا تھا کہ ملزم پرویز مشرف کو عدالت نے بیان ریکارڈ کرانے کا موقع دیا لیکن انہوں نے عدالت کے اس موقع کا فائدہ نہیں اٹھایا۔

جسٹس یاور علی نے کہا کہ پرویز مشرف کے وکیل نے دبئی کے امریکن ہسپتال کا 14 اگست کا سرٹیفکیٹ پیش کیا ہے، بظاہر یہ سرٹیفیکیٹ پرانا ہے۔ سابق صدر کے وکیل سلمان صفدر نے کہا کہ دل کے عارضے کا معاملہ مسلسل میرے موکل کے ساتھ ہے۔ پرویز مشرف کا اکتوبر میں ایک ڈاکٹر طبی جائزہ لے گا۔ لہٰذا عدالت سے درخواست ہے کہ وہ ہمیں آئندہ طبی معائنے تک کا وقت دے۔ ان کا کہنا تھا کہ اگر عدالت چاہتی ہے کہ نیا طبی سرٹیفکیٹ پیش کروں تو وقت دیا جائے۔

جسٹس یاور علی نے سوال کیا کہ کیا پرویز مشرف کے 342 کے بیان کے بغیر عدالت فیصلہ کر سکتی ہے؟ کیا ان کا بیان ریکارڈ کیے بغیر کیس چلایا جا سکتا ہے؟ استغاثہ بتائیں کیا پرویز مشرف کا بیان ویڈیو لنک پر ریکارڈ ہو سکتا ہے؟

وکیل استغاثہ نے کہا کہ پرویز مشرف کا ماضی کا ریکارڈ سامنے ہے۔ وہ ویڈیو لنک پر آنے کو تیار نہیں۔

خصوصی عدالت نے پرویز مشرف کا بیان ریکارڈ کرنے کے لیے جوڈیشل کمیشن بنانے کا حکم دیا۔

جسٹس یاور علی کا کہنا تھا کہ مشرف کی علالت کے باعث بیان ریکارڈ کرنے کے لیے کمیشن کے قیام کا فیصلہ کیا جس کے اراکین اور دائرہ کار کا فیصلہ بعد میں کیا جائے گا جبکہ اگر کسی کو اعتراض ہو تو جوڈیشل کمیشن کا قیام ہائی کورٹ میں چیلنج کیا جاسکتا ہے۔

سابق صدر کے خلاف سنگین غداری کیس کی سماعت 14 نومبر تک ملتوی کردی گئی۔

جنرل (ر) پرویز مشرف کے خلاف وفاقی حکومت کی جانب سے وزارتِ داخلہ کے ذریعے سنگین غداری کیس کی درخواست دائر کی گئی تھی جسے خصوصی عدالت نے 13 دسمبر 2013 کو قابلِ سماعت قرار دیتے ہوئے سابق صدر کو 24 دسمبر کو طلب کیا تھا۔ لیکن صدر مشرف طویل عرصہ سے بیرون ملک مقیم ہیں اور اس کیس کی کارروائی اب تک مکمل نہیں ہو سکی۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG