رسائی کے لنکس

logo-print

بحری قزاقی میں 36 فی صد ریکارڈ اضافہ


بحری قزاقی میں 36 فی صد ریکارڈ اضافہ

بحری نگرانی سے متعلق عہدے داروں کا کہناہے کہ صومالی قزاقوں نے اس سال کے پہلے چھ ماہ میں پہلی بار ریکارڈ تعداد میں بحری جہازوں کو قزاقی کا نشانہ بنایا ہے۔

لندن میں قائم انٹرنیشنل میری ٹائم بیورو نے بتایا کہ قزاقوں کے کئی حملے ماضی کے مقابلے میں زیادہ پرتشدد اور دلیرانہ تھے۔

جمعرات کو جاری ہونے والی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ سال کی پہلی ششماہی میں دنیا بھر میں قزاقی کی واردتوں میں 36 فی صد اضافہ ہوا ہے۔ اس عرصے کے دوران پچھلے سال کی 196 کارروائیوں کے مقابلے میں بحری جہازوں پر 266 حملے کیے گئے۔

بحری نگرانی کے عالمی ادارے کے ڈائریکٹر پوٹنگال مکونڈن نے کہا ہے کہ صومالی قزاق پہلے سے زیادہ خطرے مول لینے لگے ہیں۔ ادارے کا کہناہے کہ یہ پہلا موقع ہے کہ قزاقوں نے مون سون کے موسم کے دوران بحرہ ہند میں ایک جہاز کو اپنے قبضے میں لینے کی کوشش کی۔

امریکہ سمیت 70 سے زیادہ ممالک کے نمائندے ، صومالیہ کے قریبی سمندروں میں قزاقی کےمسئلے سے نمنٹے کے لیے جمعرات کے روز نیویارک میں جمع ہورہے ہیں۔

گروپ قزاقوں کے حملوں سے محفوظ رہنے کے طریقے ڈھونڈنے کی کوشش کررہاہے۔ عالمی تنظیم کا کہناہے کہ دنیا کی اس مصروف ترین بحری گذرگاہ پر قزاقی کی بڑھتی ہوئی کارروائیاں تجارتی اور انسانی امدادی پروگراموں کے سامان کی نقل وحرکت کے لیے بڑا خطرہ بن رہی ہیں۔

بین الاقوامی پانیوں میں انٹرنیشنل بحری فوجی دستوں کی گشت کے باوجود صومالی قزاق بحرہ ہند اور بحیرہ عرب میں اپنی کارروائیاں جاری رکھے ہوئے ہیں۔

حالیہ چند برسوں کے دوران قزاق درجنوں بحری جہازوں اور ان کے عملے کو یرغمال بنا کر لاکھوں ڈالر تاوان وصول کرچکے ہیں۔

XS
SM
MD
LG