رسائی کے لنکس

logo-print

عالمی ادارہ صحت کے زیرِ اہتمام تپِ دِق کا عالمی دن


عالمی ادارہٴ صحت یا ڈبلیو ایچ او نے کہا ہے کہ تپِ دق کے انسداد کے لیے مسلسل کوششوں کے باوجود دنیا کی ایک تہائى آبادی ایسے لوگوں پر مشتمل ہے جن کے جسم میں تپِ دِق کے جراثیم موجود ہیں اور ان میں سے دس فیصد لوگ بیمار ہوجائیں گے۔

بدھ کے روز تپِ دِق کا عالمی دن منایا جارہا ہے اور اقوامِ متحدہ کے صحت کے ادارے کا کہنا ہے کہ جنوب مشرقی ایشیا، افریقہ اور مشرقی بحیرہٴ روم کے ملکوں میں نئے مریضوں کی تعداد میں ہر سال اضافہ ہورہا ہے۔

ڈبلیو ایچ او نے کہا ہے کہ 2008ء میں اس بیماری کے باعث دنیا بھر میں 13 لاکھ لوگ ہلاک ہوئے اور بیشتر موتیں جنوب مشرقی ایشیا اور افریقہ کے ملکوں میں ہوئیں۔

ڈبلیو ایچ او نے کہا ہے کہ تپِ دق کی وہ قسم خاص طور پر باعثِ تشویش ہے، جس کے جراثیم پر دوائیں اثر نہیں کرتیں ۔عالمی ادارہٴ صحت نے کہا ہے کہ بنگلہ دیش، بھارت، انڈونیشیا اور تھائى لینڈ میں تپِ دِق کی ایسی ہی ایک قسم کا پتا چلا ہے جس پر کئى مختلف دوائیں اثر نہیں کرتیں۔

XS
SM
MD
LG