رسائی کے لنکس

logo-print

سہیل رحمان دنیا کا پہلا تربیت یافتہ معذور فٹ بال کوچ


برطانیہ سے تعلق رکھنے والا سہیل رحمان دنیا کا پہلا تربیت یافتہ معذور فٹ بال کوچ بتایا جاتا ہے، جو وہیل چئیر تک محدود ہونے کےباوجود، جسمانی طور پر فٹ نوجوانوں کی فٹ بال ٹیم کے لیے کوچنگ کے فرائض انجام دے رہا ہے۔

پروفشنل اسپورٹس کی دنیا میں داخلے کے لیے کھلاڑی کی اچھی صحت اور فٹنس لازمی شرط ہے۔ لیکن، سہیل رحمان ایک ایسا نوجوان ہے جس نے پیروں کی معذوری کے باوجود خود کو کھیل کی دنیا سے کبھی الگ نہیں رکھا اور ایک وقت ایسا بھی آیا جب جسمانی معذوری اس کے شوق کی راہ میں رکاوٹ بننے لگی تو اس نے ہمت، محنت اور سچے جذبے سے اپنی تقدیر کا رخ دوبارہ کھیلوں کی دنیا کی جانب موڑ لیا جو ہمیشہ سے اس کی منزل تھی۔

بتایا گیا ہے کہ برطانیہ سےتعلق رکھنے والا سہیل رحمان دنیا کا پہلا تربیت یافتہ معذور فٹ بال کوچ ہے جو وہیل چئیر تک محدود ہونے کےباوجود جسمانی طور پر فٹ نوجوانوں کی فٹ بال ٹیم کے لیے کوچنگ کےفرائض انجام دے رہا ہے۔

اکیس سالہ سہیل رحمان 'سنڈے لیگ ٹیم' کا کوچ بننا اپنی کامیابی کی پہلی سیڑھی مانتے ہیں، جن کی نظروں نے بہت اونچے خواب سجا رکھے ہیں۔

وہ خود کو 'مانچسٹر یونائٹیڈ' جیسی بڑی اور پروفشنل ٹیم کا کوچ بنتا دیکھنا چاہتے ہیں اور انھیں اپنا خواب اس وقت حقیقت سے قریب تر نظر آنے لگا، جب مانچسٹر یونائٹیڈ ٹیم کے سابقہ منیجر سر الیکس فرگوسن نے انھیں فٹ بال کا تربیت یافتہ کوچ بننے پر مبارکباد کا خط لکھا اور مستقبل کے مقاصد حاصل کرنے کے لیے حوصلہ افزائی کی۔ سہیل کے لیے یہ بڑے اعزاز کی بات تھی جس کے بعد اس نے فٹ بال کا فل ٹائم کوچ بنانے کے لیے محنت شروع کر دی۔

یورک شائر کےمقامی روزنامےکی رپورٹ کے مطابق، سہیل رحمان فٹ بال کھیلنے کا جنون کی حد تک شوق رکھتا تھا۔

لیکن، پیدائشی طور پر ریڑھ کی ہڈی کے پٹھوں Atrophy)) کی معذوری سے دوچار تھا۔ اس موروثی بیماری میں جسم کے پٹھے ناتواں ہوجاتے ہیں جس سے جسمانی نقل و حرکت بتدریج کم ہوتی جاتی ہے۔

فٹ بال کو اپنی زندگی کا مقصد بنانے والا سہیل اپنی بیماری کی وجہ سے بچپن سے اپنے پیروں کے پنجوں کی انگلیوں پر چلا کرتا تھا۔

اس کے باوجود، وہ مقامی فٹ بال ٹیم اور اسکول کی ٹیم کی طرف سے فٹ بال کھیلا کرتا تھا۔ لیکن، اس وقت بیماری سہیل کو فٹ بال کھیلنے کے جنون سے دور نہیں لےجا سکی۔

سہیل نے کہا کہ ،''13 سال کی عمر میں مجھے اپنی زندگی کی سب سے بری خبر سنائی گئی۔ڈاکٹر نے بتایا کہ آئندہ دو برسوں میں میری بیماری مجھے مکمل طور پر وہیل چئیر کا محتاج بنا دے گی اور میرا اپنے قدموں پر کھڑا ہونے کا خواب کبھی پورا نہیں ہو سکے گا۔ مجھ سے میری زندگی کا مقصد چھن گیا تھا۔

’لیکن، میں نے اپنی زندگی کو ایک نیا مقصد دیا اور سوچ لیا کہ اگرچہ فٹ بال کھیلنا میرا مقدر نہیں ہے۔ لیکن، میں اپنی معلومات کو اسی شعبے میں آزما سکتا ہوں۔‘'

اور جب میں لیڈزکالج میں آئی ٹی کی تعلیم مکمل کر رہا تھا تو ایک روز فٹ بال کے ٹیچر سے اپنے شوق کا اظہار کیا، جنھوں نے میری حوصلہ افزائی کرتے ہوئے کہا کہ اگر میں چاہوں تو ان کے ایک 6 ہفتے کے فٹ بال کلب کے ساتھ رہ سکتا ہوں اور اسی دوران انھوں نے مجھے فٹ بال کوچنگ کورس میں داخلہ لینے کا مشورہ دیا۔

16برس کی عمر میں سہیل نے فٹ بال کوچنگ کا پہلا بیج مکمل کر لیا اور رضاکارانہ طور پر مانچسٹر یونائیٹیڈ اسپورٹرز کی ایک معذوروں کی ٹیم کے لیے کوچنگ شروع کی اور جس کے بعد سہیل نے کبھی پیچھے مڑ کر نہیں دیکھا۔

ابتداء میں سہیل نے 10 برس سے کم عمر بچوں کی مقامی فٹ بال ٹیم کو تربیت دینی شروع کی۔ اسی دوران سہیل نے فٹ بال کوچنگ کے مزید بیجز 2 اور 3 بھی مکمل کر لئے۔

آخر کار اسپورٹس ٹیکنالوجی کی تعلیم، اسکول کے زمانے میں فٹ بال گراؤنڈ پر گزارا ہوا وقت اور کوچنگ کے تجربے نے سہیل کو اس مقام تک پہنچا دیا، جب انھیں پہلی بار جسمانی طور پر فٹ نوجوانوں کی سنڈے لیگ ٹیم کے لیے کوچنگ کا موقع حاصل ہو گیا۔

سہیل نے بتایا کہ، 'ایک روز، ایک بچے نے مجھ سے سوال کیا کہ جب آپ فٹ بال کو کک نہیں مار سکتے، تو آپ کو کیسا لگتا ہے؟ میں نے اسے پوری خوشدلی سے جواب میں کہا کہ اگر میں فٹ بال کو کک نہیں مار سکتا ہوں تو کچھ لوگ دنیا میں ایسے بھی ہوں گےجو شاید فٹ بال کو دیکھنے کی حسرت رکھتے ہوں گے، اس لحاظ سے، میں بہت خوش قسمت ہوں ۔'

گزشتہ برس، سہیل نے ایک تنظیم ’کلاس آن گراس‘ کے نام سے بنائی ہے جس کے تحت بچوں کو دوستانہ ماحول میں فٹ بال کی تربیت فراہم کی جاتی ہے۔ تاہم، انھوں نے خواہش ظاہر کی کہ وہ چاہتے ہیں کہ ان کی تنظیم وہیل چئیر پر بیٹھ کر کھیلنے والوں کے لیے بھی ایک ٹیم بنا سکے۔

گزشتہ اتوار سہیل نے پہلی بار دنیا کے سامنے ویل چئیر پر بیٹھ کر جسمانی طور پر فٹ نوجوانوں کے ایک ٹورنامنٹ کی کوچنگ کے فرائض انجام دئیے،جہاں انھیں دیکھنے کے لیے لیڈز فٹ بال ٹیم کے بڑے بڑے کھلاڑی جمع ہوئے۔
XS
SM
MD
LG