رسائی کے لنکس

logo-print

عبدالرحمٰن الدخیل کا نام دہشت گردوں کی خصوصی عالمی فہرست میں شامل


عبدالرحمٰن الدخیل ایک طویل مدت سے امریکہ کی دہشت گرد تنظیم اور لشکر طیبہ کی عالمی دہشت گردی کی خصوصی فہرست میں شامل رہے ہیں؛ اور وہ 1997ء اور 2001ء کے دوران لشکر طیبہ کی سرگرمیوں میں حصہ لیتا رہا جو بھارت پر حملوں میں ملوث تھی

امریکی محکمہ خارجہ نے عبدالرحمٰن الدخیل کو دہشت گردی کی خصوصی عالمی فہرست میں شامل کیا ہے۔ یہ بات محکمہ خارجہ کی ترجمان نے منگل کے روز جاری کردہ ایک سرکاری اعلان میں کہی ہے۔

اس فہرست میں شامل کیے جانے کے اعلان سے ایسےغیر ملکی پر پابندیاں عائد کی جاتی ہیں، جو دہشت گردی کی سرگرمیوں میں ملوث رہا ہے یا اُن سے دہشت گردی کا خطرہ ہے، جس سے امریکی شہریوں کی سلامتی، قومی سکیورٹی، امور خارجہ کی پالیسی یا امریکی معیشت کو خدشات لاحق ہیں۔

ترجمان نے کہا ہے کہ آج کے اعلان کے بعد دخیل کو اُن وسائل تک رسائی حاصل نہیں ہوگی، جن کی مدد سے وہ دہشت گرد حملے کی منصوبہ سازی کرسکے۔

دیگر مضمرات یہ کہ امریکی تحویل میں اُن کی ملکیت اور مفادات منجمد ہوجائیں گے، اور امریکی شہریوں کے لیے اُن سے مالی لین دین کرنا ممنوع ہوگا۔

عبدالرحمٰن الدخیل ایک طویل مدت سے امریکہ کی دہشت گرد تنظیم اور لشکر طیبہ کی عالمی دہشت گردی کی خصوصی فہرست میں شامل رہے ہیں؛ اور وہ 1997ء اور 2001ء کے دوران لشکر طیبہ کی سرگرمیوں میں حصہ لیتا رہا جو بھارت پر حملوں میں ملوث تھی۔

سنہ 2004میں دخیل کو برطانیہ کی افواج نے عراق میں پکڑا تھا؛ پھر وہ عراق اور افغانستان میں امریکی تحویل میں رہا، جب تک اُنھیں سنہ 2014 میں پاکستان کے حوالے نہیں کیا گیا۔

اعلان میں کہا گیا ہے کہ پاکستانی تحویل سے رہائی کے بعد ایک بار پھر وہ لشکر طیبہ کے لیے کام سے منسلک ہوگیا۔ سنہ 2016 میں دخیل ریاست جموں و کشمیر میں جموں کے لیے لشکر طیبہ کا ڈویژنل کمانڈر رپا۔

سال 2018 کے اوائل میں، دخیل لشکر طیبہ کا ایک سینئر کمانڈر رہا۔

ترجمان نے کہا ہے کہ آج کا یہ اقدام امریکی عوام اور بین الاقوامی برادری کو ان دہشت گرد سرگرمیوں سے آگاہ کرتا ہے جن میں عبدالرحمٰن الدخیل ملوث رہا ہے، یا ملوث ہوسکتا ہے۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG