رسائی کے لنکس

بے نظیر قتل کیس کے فیصلے کے خلاف اپیلیں منظور


بے نظیر بھٹو کراچی میں ایک پریس کانفرنس میں گفتگو گر رہی ہیں۔ 13 دسمبر 2007

اپیل میں استدعا کی گئی ہے کہ عجلت میں سنائے گئے فیصلے کو کالعدم قرار دے کر انہیں رہا کیا جائے۔

عدالت عالیہ راولپنڈی بنچ نے سابق وزیراعظم بے نظیر بھٹو قتل کیس میں قید اور جرمانے کی سزا پانے والے دونوں پولیس افسران کی اپیلوں میں فریقین کو نوٹس جاری کرتے ہوئے جواب طلب کر لیا ہے۔

جسٹس محمد طارق عباسی اور جسٹس حبیب اللہ عامرپر مشتمل ڈویژن بنچ نے اپیلیں سماعت کے لئے منظور کرتے ہوئے حکومت پاکستان اور مدعی مقدمہ ایس ایچ او تھانہ سٹی کاشف ریاض کو نوٹس جاری کر دیئے ہیں۔ پیر کے روز سماعت کے موقع پر سابق سٹی پولیس افسر (سی پی او)راولپنڈی سعود عزیز اور سابق سپرنٹنڈنٹ پولیس (ایس پی)راول ڈویژن خرم شہزادحیدرکی جانب سے غنیم عبیر ایڈووکیٹ پیش ہوئے۔ دونوں پولیس افسران نے انسداد دہشت گردی راولپنڈی کی خصوصی عدالت نمبر1کے فیصلے کو چیلنج کرتے ہوئے عدالت عالیہ راولپنڈی بنچ میں سزا کے خلاف 7ستمبرکواپیلیں دائر کی تھیں۔

ڈی آئی جی سعود عزیز اور ایس پی خرم شہزادحیدر نے اپنے وکلااعظم نذیر تارڑ،ایس ایم فرہاد ترمذی اور راجہ غنیم عبیر خان کے ذریعے دائر اپیل میں حکومت اور ایس ایچ او تھانہ سٹی کاشف ریاض کو فریق بناتے ہوئے موقف اختیار کیا کہ ان کی سزائیں کالعدم قرار دے کرانہیں رہا کیا جائے۔

پٹیشن میں موقف اختیار کیا گیا کہ درخواست گزاروں نے بے نظیر بھٹو کے جلسہ گاہ کو سیکیورٹی فراہم کی تھی، جو خدمات مہیا کر رہا تھا اسی کو نشانہ بنا دیا گیا حالانکہ استغاثہ کے پاس درخواست گزار کے خلاف کوئی ٹھوس شہادت بھی موجود نہیں۔ گواہان کے بیانات بھی تضادات سے بھرپور ہیں اس طرح قانون شہادت کے تحت فوجداری قوانین کی رو سے مقدمے کا ٹرائل کیا گیا اور نہ ہی عدالتی فیصلے میں انکوائری رپورٹس کو مدنظر رکھا گیا۔

فیصلے کے مطابق گرفتار 5 ملزمان اعتزاز شاہ، حسنین گل، شیر زمان، رفاقت اور رشید ترابی کو بری کردیا گیا جبکہ درخواست گزار کو مجرم قرار دے کر محض شبے اور گمان کی بنیاد پر17، 17 سال قید اور10لاکھ روپے فی کس جرمانے کی سزا سنائی اور سابق صدر پرویز مشرف کو اشتہاری قرار دے کر ان کے دائمی وارنٹ گرفتاری جاری کرنے کے علاوہ جائیداد قرق کرنے کا حکم بھی دے دیا۔

اپیل میں استدعا کی گئی ہے کہ عجلت میں سنائے گئے فیصلے کو کالعدم قرار دے کر انہیں رہا کیا جائے۔

یاد رہے کہ انسداد دہشت گردی راولپنڈی کی خصوصی عدالت نمبر1کے جج اصغر خان نے بے نظیر قتل کیس کا ٹرائل مکمل ہونے پر 31اگست2017کوسابق سی پی او سعود عزیز اور سابق ایس پی راول ڈویژن خرم شہزاد حیدرکو تعزیرات پاکستان کی دفعہ 119اور201کے تحت مجموعی طور پر 17,17سال قید اور10لاکھ روپے فی کس جرمانے کی سزا سنائی تھی۔

سانحہ لیاقت باغ میں سابق وزیر اعظم بے نظیر بھٹو سمیت 23افراد جاں بحق اور70سے زائد زخمی ہو گئے تھے جس پر تھانہ سٹی کے ایس ایچ او کاشف ریاض کی مدعیت میں مقدمہ نمبر471/07درج کیا گیا تھا۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG